زخم کھائے ہوئے دلگیر ادھر آئے ہیں|ممتاز اطہر |

زخم کھائے ہوئے دلگیر ادھر آئے ہیں|ممتاز اطہر |
زخم کھائے ہوئے دلگیر ادھر آئے ہیں|ممتاز اطہر |

  

زخم کھائے ہوئے دلگیر ادھر آئے ہیں

میر کے بعد بھی کچھ میر ادھر آئے ہیں

سلسلہ ٹوٹا نہیں شہر کی خوش بختی کا

کیا سے کیا صاحبِ توقیر ادھر آئے ہیں

خواب دیکھا کہ ستارے سرِ صحرا اُترے

پوچھنے خواب کی تعبیر ادھر آئے ہیں

کب ضروری تھی بھلا دشت میں آمد اپنی

لے کے ہم خواہشِ توقیر ادھر آئے ہیں

جس کے حلقے ہیں نہ جھنکار سنائی دی ہے

کھینچ لائی ہے وہ زنجیر ، ادھر آئے ہیں

یہ کڑا وقت بھلا اُس نے گزارا کیسے

دیکھنے ہجر کی تاثیرادھر آئے ہیں

شاعر:ممتاز اطہر

(ممتاز اطہر کی وال سے)

Zakhm   Khaaey   Huay   Dilgeer   Idhar   Aaey   Hen

MEER    Baad   Bhi   Kuchh  MEER   Idhar   Aaey   Hen

 Silisla   Toota   Nahen    Shehr   Ki   Khush   Bakhti   Ka

Kaya   Say    Kaya   Sahib-e-Toqeer   Idhar   Aaey   Hen

 Khaab    Dekha    Keh    Sitaaray   Sar-e-Sehra   Utray

Poochhnay     Khaab   Ki    Tabeer   Idhar   Aaey   Hen

 Kab    Zaroori    Thi    Bhala    Dasht    Men    Aamad   Apni

Lay   K   Ham   Khaahish-e-Toqeer   Idhar   Aaey   Hen

 Jiss    K   Halqay   Hen    Na    Jhankaar    Sunaai    Di   Hay

Khainch    Laai    Hay   Wo    Zanjeer   Idhar   Aaey   Hen

 Yeh    Karra    Qaqt    Bhalaa   Uss   Nay   Guzaara   Kaisay

Dekhnay   Hijr    Ki   Taseer   Idhar   Aaey   Hen

 Poet: Mumtaz    Athar

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -