اے سی سی اے کا آج سے نئے اور بلامعاوضہ کیئرئیر نیوی گیٹر ٹول متعارف کرانے کااعلان، اقدامات فائنل

اے سی سی اے کا آج سے نئے اور بلامعاوضہ کیئرئیر نیوی گیٹر ٹول متعارف کرانے ...

  

 ملتان (پ ر)دی ایسوسی ایشن آف چارٹرڈ سرٹیفائیڈ اکاؤنٹنٹس(اے سی سی اے) نے آج ایک نئے اور بلامعاوضہ کیرئیر نیوی گیٹر ٹول متعارف کرانے کا اعلان کیا ہے جس کا مقصد اکاؤنٹنٹس اور فنانس سے تعلق رکھنے والے پیشہ ورافراد کو اپنے کیرئیر میں (بقیہ نمبر46صفحہ6پر)

 ترقی کرنے اور اِس شعبے میں دستیاب روزگار کے مواقع سے فائدہ اٹھانے میں مدد فراہم کی جاسکے۔یہ ڈیجیٹل ٹول اْن بنیادی اسکلز شناخت کرتا ہے جن کی اکاؤنٹنٹس کو کیرئیر کے ہر مرحلے پر ضرورت پڑتی ہے اوراْنھیں موقع فراہم کرتا ہے کہ وہ آئندہ دہائی میں بھی کامیاب ہو سکیں۔یہ ٹول فنانس سے تعلق رکھنے والے افراد کی ترقی کے لیے راستے بھی تجویز کرتا ہے اور ایسے مواقع نمایاں کرتا ہے جن میں، اِن اسکلز میں بہتری لا کر، ترقی کی جا سکتی ہے۔ کیرئیر نیوی گیٹر نے سرکاری اورنجی شعبوں میں 120 کرداروں کی شناخت کی ہے اور اْن کے لیے درکار اسکلز اور مطلوبہ تجربہ بیان کیا ہے، تاکہ ارکان اور اسٹوڈنٹس،جونیئر کی سطح سے چیف ایگزیکٹو کی سطح تک،اپنے کیرئیر کا راستہ ترتیب دے سکیں۔جہاں کہیں تربیت کی کمی ہو، یہ ٹول اْنھیں کنٹی نیوس پروفیشنل ڈیویلپمنٹ (CPD) کورسز سے منسلک کرتاہے تاکہ وہ اس کمی کو دور کر سکیں۔ہر سطح پر ٹھیک کس نوعیت کی صلاحیتوں کی ضرورت ہے،اے سی سی اے کا مقصد اسکلز کا نقشہ تیار کر کے اسٹوڈنٹس اور ارکان کو سینئر لیڈرشپ کے کرداروں تک پہنچنے میں مدد فراہم کرنا ہے۔ یہ ٹول اْن کے لیے اِس بات کو شفاف بنائے گا کہ اْنھیں کن اقدامات کے کرنے کی ضرورت ہے کہ وہ، ان کے کیرئیر کے راستے میں آئندہ کامیابی کے لیے مسابقتی برتری فراہم کر سکے۔اگر ایک مینجمنٹ اکاونٹ،چیف فنانشل آفیسر (CFO) بننا چاہتا ہے، کیرئیر نیوی گیٹراْس کے لیے ایسے کورسز تجویز کرے گاجن کے ذریعے مطلوبہ علم اور اسکلز حاصل کی جا سکیں۔ یہ اے سی سی اے کے میگزین ’اکاؤنٹنٹ اینڈ بزنس‘میں شائع شدہ سی ایف او سے تعلق رکھنے والے متاثر کن مطالعوں سے بھی لنک قائم کرے گا۔ ارکان کی سطح پر،کیرئیر نیوی گیٹر اے سی سی اے کی کیریئرز سائٹ پرموجودہ اسامیوں کے ساتھ بھی لنک پیش کرتا ہے اورمزید تلاش بھی کرتا ہے تاکہ وہ کسی رکاوٹ کے بغیر نئے کردار کے لیے درخواست دے سکیں جو اْن کی اسکلز اور تجربہ سے مطابقت رکھتے ہوں۔ اے سی سی اے کیرئیرز میں ہر ماہ،اکاؤنٹنسی اور فنانس کے پیشے سے تعلق رکھنے والی 200,000 سے زائد اسامیاں پوسٹ کی جاتی ہیں جن میں عالمی سطح  کی اور ہر سطح کی، اسامیاں بھی ہوتی ہیں۔یہ کیرئیر کے حوالے سے مشورے اور ورچوئل کیرئیر فیرز کے بارے میں معلومات بھی فراہم کرتا ہے۔ اے سی سی اے کیریئرز کے ڈیٹا کے مطابق،گزشتہ برس، عالمی ہائرنگ ہاٹ اسپاٹ پر جن ممالک سے سب سے زیادہ درخواستیں دی گئیں ان میں پاکستان، ملائیشیا، برطانیہ اور متحدہ عرب امارات شامل ہیں۔اس بارے میں اے سی سی اے کیرئیرز کے ہیڈ، نائیجل بکنیل نے کہا:”یہ بات واضح ہے کہ اے سی سی اے کا ٹیلنٹ اِس قابل ہے کہ وہ وبا کے پورے عرصے میں نہایت مضبوط کیریئر پوزیشن برقرار رکھ سکے۔“نائیجل نے مزید کہا:”ہمارے باصلاحیت اکاؤنٹنٹس اور اسٹوڈنٹس کی طلب بہت زیادہ ہے اور اْن کی اسکلز کی بہت قدر کی جاتی ہے جن میں سے متعدد کا اظہار وبا کے اقتصادی اثرات کے دوران ہوا۔مستقبل پر نظر رکھنے والے مستحکم کارو بار کے لیے فنانس سے تعلق رکھنے والے پیشہ ور افراد کی، عالمی سطح پر،تمام شعبوں اس قدر زیادہ طلب نہیں رہی ہے۔”نائیجل نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا:”ہم سمجھتے ہیں کہ کیرئیر نیوی گیٹر، فنانس سے تعلق رکھنے والے پیشہ ور افرادکے لیے اُن کے کیریئر میں مزید ترقی کا سبب بن سکتا ہے۔اس بات کا علم ہونا کہ آپ کو،ٹھیک اِس وقت،کن اسکلز کی ضرورت ہے اور مستقبل میں ضرورت ہو گی،طویل مدتی کیئر اور کاروبار کی ترقی میں کلیدی اہمیت رکھتے ہیں۔“  ایسوسی ایشن نے کیرئیر نیوی گیٹر گزشتے ہفتے، اپنے فلیگ شپ گلوبل ڈیجیٹل ایونٹ کے موقع پر،متعارف کرایا تھا جس کی میزبانی اے سی سی اے کے صدر، مارک ملر اور چیف ایگزیکٹو آفیسر، ہیلن برانڈ نے کی تھی۔اِس حوالے سے مارک ملر نے کہا:”میں کیرئیر نیوی گیٹر متعارف کرانے پر بہت خوش ہوں جو حقیقی معنوں میں ملازمت کے قابل ہونے اور کیرئیر میں مدد کی رینج کا اضافہ کرتا ہے جو ہم اپنے موجودہ اور مستقبل کے ارکان کے لیے رکھتے ہیں۔“مارک نے مزید کہا:”یہ بات اہم ہے کہ ہم، پیشہ ور اکاؤنٹنٹس کے طور پر، مستقبل کے بارے میں سوچیں اور اپنے کردار سے زیادہ سے زیادہ فائدہ اٹھائیں اور مثبت تبدیلی کے لیے تحریکی کردار ادا کریں اور اْن کی جانب سے پیش کیے گئے تمام مواقع سے فائدہ اٹھائیں تاکہ ہمارے پاس حال، اور مستقبل کے لیے ایک مستحکم کاروبار اور فنانس سے تعلق رکھنے والا پیشہ موجود ہو۔“

فائنل

مزید :

ملتان صفحہ آخر -