لا پتہ افراد کے اہلخانہ کو ملک کا شہری سمجھیں ، ان کیلئے فنڈز ہی مقرر کر دیں، سندھ ہائیکورٹ کے کیس میں ریمارکس

لا پتہ افراد کے اہلخانہ کو ملک کا شہری سمجھیں ، ان کیلئے فنڈز ہی مقرر کر دیں، ...
لا پتہ افراد کے اہلخانہ کو ملک کا شہری سمجھیں ، ان کیلئے فنڈز ہی مقرر کر دیں، سندھ ہائیکورٹ کے کیس میں ریمارکس

  

سندھ ( ڈیلی  پاکستان آن لائن ) سندھ ہائیکورٹ میں لا پتہ افراد کے اہلخانہ کی کفالت کے معاملے پر سماعت ہوئی ،عدالت نے ریمارکس دیے کہ لا پتہ افراد کے اہلخانہ کو ملک کا شہری سمجھیں ، ان کیلئے فنڈز ہی مقرر کر دیں۔

نجی ٹی وی 24نیوز کے مطابق سندھ ہائیکورٹ میں لا پتہ افراد کے اہلخانہ کی کفالت سے متعلق کیس کی سماعت جسٹس صلاح الدین پنہور نے کی ،عدالت نے ریمارکس دیے کہ اہلخانہ کے درد اور تکلیف کا کسی کو احساس ہی نہیں ہے ، لا پتہ افراد کی بازیابی کیلئے اتنے فورمز بنائے گئے مگر نتیجہ صفر ہے ، اہلخانہ کی کفالت کیلئے کوئی فنڈز ہی مقرر کر دیں ،ان کو ملک کا شہری سمجھیں ، سرکاری ملازمت فر اہم کی جا سکتی ہے ۔

دوران سماعت صوبائی اور وفاقی نمائندوں کی آپس میں تکرار ہوئی ، ایڈووکیٹ جنرل سندھ نے کہا کہ ہر درخواست میں کہا جاتا ہے رینجرز والے آئے اور اٹھا کر چلے گئے ۔ وفاق کے نمائندے نے کہا کہ رینجرز کو صوبائی حکومت نے امن وامان کیلئے طلب کر رکھاہے ، کوئی بھی بات ہو یہ لوگ رینجر زپر الزام عائد کر دیتے ہیں ، اگر رینجرز سے ان کو مسئلہ ہے تو واپس کر دیں ۔

عدالت نے ریمارکس دیے کہ یہ انتہائی سنجیدہ مسئلہ ہے قانونی نکات میں کیوں الجھا رہے ہیں ، لا پتہ افراد کے ہلخانہ کی کفالت کے معاملے پر فوکس کریں ۔

مزید :

قومی -علاقائی -سندھ -