فٹ بال کلب کی خریداری کے بعد سعودی عرب کیلئے نئی مشکل کھڑی ہوگئی، مطالبہ سامنے آگیا

 فٹ بال کلب کی خریداری کے بعد سعودی عرب کیلئے نئی مشکل کھڑی ہوگئی، مطالبہ ...
 فٹ بال کلب کی خریداری کے بعد سعودی عرب کیلئے نئی مشکل کھڑی ہوگئی، مطالبہ سامنے آگیا

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) حال ہی میں سعودی عرب کے پبلک انویسٹمنٹ فنڈ نے نیوکاسل فٹ بال کلب 30کروڑ پاﺅنڈ میں خریدا جس سے یہ کلب پریمیئر لیگ کا امیر ترین کلب بن گیا۔ تاہم اب دیگرفٹ بال کلبوں نے نیوکاسل کی فروخت کے اس معاہدے پر اعتراض کرتے ہوئے پریمیئر لیگ کے عہدیداروں سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کر دیا ہے۔ دی سن کے مطابق دیگر کلبوں کے سربراہان کا کہنا ہے کہ نیوکاسل کلب کی سعودی پبلک انویسٹمنٹ فنڈ کو فروخت سے قبل انہیں کوئی پیشگی وارننگ نہیں دی گئی۔اس طرح کا متنازعہ معاہدہ ہونے پر پریمیئر لیگ کا بورڈ مستعفی کیوں نہیں ہو جاتا۔

رپورٹ کے مطابق اگرچہ دیگر کلبوں کے مالکان جانتے ہیں کہ اب وہ اس حوالے سے کچھ نہیں کر سکتے تاہم وہ اس معاملے میں پریمیئر لیگ کے چیف ایگزیکٹو رچرڈ ماسٹرز، چیئرمین گیری ہف مین اور ان کے کولیگز کے متعلق سوال اٹھا رہے ہیں اور ان سے استعفے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔کلب مالکان نے گزشتہ روز لندن میں ایک ہنگامی میٹنگ بلائی جس میں ایسٹن ولا، کرسٹل پیلیس، برائٹن اور ویسٹ ہیم کی طرف سے پریمیئرلیگ کے پانچ رکنی بورڈ سے سنجیدہ سوالات پوچھے گئے۔واضح رہے کہ جس سعودی پبلک انویسٹمنٹ فنڈ نے نیوکاسل کلب خریدا ہے، سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اس کلب کے بڑے شراکت داروں میں سے ایک ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -