’پی ڈی ایم کا چہلم کوئٹہ میں منائیں گے ،جام کمال بلوچستان کے وزیر اعلیٰ ہیں اور رہیں گے ‘ 

’پی ڈی ایم کا چہلم کوئٹہ میں منائیں گے ،جام کمال بلوچستان کے وزیر اعلیٰ ہیں ...
’پی ڈی ایم کا چہلم کوئٹہ میں منائیں گے ،جام کمال بلوچستان کے وزیر اعلیٰ ہیں اور رہیں گے ‘ 

  

کوئٹہ( ڈیلی پاکستان آن لائن)ترجمان حکومت بلوچستان لیاقت شاہوانی نے کہا ہے کہ جام کمال بلوچستان کے وزیر اعلیٰ ہیں اور رہیں گے، ہم اپنے دوستوں کے ساتھ رابطے میں ہیں اور جلد انہیں منالینگے،پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ( پی ڈی ایم) کو پتہ ہے کہ جام کمال کیخلاف سازش ناکام ہوگی لیکن انکا مقصد صرف ترقی کا سفر روکنا ہے ،پی ڈی ایم کا چہلم کوئٹہ میں منائینگے ،جام کمال کو وزیر اعظم کی مکمل حمایت حاصل ہے،ہرنائی میں المناک زلزے میں 17 افراد شہید ہوئے ،پاک آرمی کے شکر گزار ہیں کہ زلزلہ امدادی سرگرمیوں پیش پیش رہی۔ 

 آفیسرز کلب کوئٹہ میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے لیاقت شاہوانی نےاپوزیشن اتحاد پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہاکہ پی ڈی ایم کے کوئٹہ میں ہونے والے پہلے جلسے کے وقت بھی کہا تھا کہ ان کے ساتھ عوامی طاقت نہیں ہے ،پی ڈی ایم نے کوئٹہ جلسے کی تاریخ تین بار تبدیل کردی، جلسے کے بعد کوئٹہ میں کورونا کےکیسز بڑھ گئے،پی ڈی ایم تاحال اپنی شرارتوں سےبعض نہیں آرہی،انہیں چیئرمین سینٹ صادق سنجرانی کیخلاف سازش میں بھی نا کامی ہو ئی تھی ، پی ڈی ایم نے گذشتہ ماہ وزیر اعلیٰ کیخلاف تحریک عدم اعتماد جمع کرائی، تحریک عدم اعتماد پر اعتراضات کے بعد اپوزیشن لاپتہ ہوگئی،اپوزیشن والے بلوچستان عوامی پارٹی کے ناراض اراکین کو استعمال کررہے ہیں جبکہ بلوچستان آگے بڑھ رہا ہے،کینسرہسپتال بن رہا ہے ،سپورٹس کمپلیکسز بن رہے ہیں، لوگوں کو روزگار مل رہا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ ہرنائی زلزلے میں زخمی افراد کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے کوئٹہ منتقل کیا گیا،صوبائی ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹیز(پی ڈی ایم اے) نے زلزلہ سے متاثر ریلیف میں اہم کرادر ادا کیا،زلزلےمیں مددپرپاک فوج اوردیگراداروں کےمشکورہیں،وزیراعظم اورڈاکٹرثانیہ نشترکےبھی مشکورہیں،قدرتی آفات میں پوری قوم متحدہوکرمقابلہ کرتی ہے،ہرنائی زلزلے میں 250 گھر مکمل تباہ ہوچکے ہیں جبکہ ڈھائی ہزارگھروں کوجزوی نقصان پہنچا،زلزلہ متاثرین کو  تنہا نہیں چھوڑیں گے اورانکی مدد کی جائے گی، آفٹر شاکس کا سلسلہ بھی جاری ہے، آفٹر شاکس میں کوئی نقصان نہیں ہوا، زلزلہ متاثرین کی امدادی سرگرمیوں میں مصروف صرف رجسٹرڈ این جی اوز کو اجازت دی گئی ہیں۔

مزید :

علاقائی -بلوچستان -کوئٹہ -