پانچ سالہ معصوم بچی ہوش میں آگئی ، پولیس کا قریبی رشتہ داروں کو بھی شامل تفتیش کرنے کافیصلہ ، وزیراعظم کا ملزمان کی جلد گرفتاری کا حکم

پانچ سالہ معصوم بچی ہوش میں آگئی ، پولیس کا قریبی رشتہ داروں کو بھی شامل ...

بیٹیوں کے مجرموں کوکبھی معاف نہیں کیا : پرویز رشید، ملزمان جلد قانون کے کٹہرے میں ہوں گے: پولیس

پانچ سالہ معصوم بچی ہوش میں آگئی ، پولیس کا قریبی رشتہ داروں کو بھی شامل تفتیش کرنے کافیصلہ ، وزیراعظم کا ملزمان کی جلد گرفتاری کا حکم

  


لاہور،راولپنڈی(مانیٹرنگ ڈیسک) صوبائی دارلحکومت میں جنسی تشدد کا نشانہ بننے والی پانچ سالہ معصوم بچی ہوش میں آگئی ہے تاہم ابھی تک بولنے کی حالت میں نہیں جس کی وجہ سے پولیس نے تاحال بچی کا بیان ریکارڈ نہیں کیا۔ دوسری طرف پولیس نے تفتیش کا دائرہ کاربڑھاتے ہوئے قریبی رشتہ داروں اور پڑوسیوں کو بھی شامل تفتیش کرنے کافیصلہ کرلیاہے اور جمعہ وہفتہ کی درمیانی رات مختلف مقامات پر چھاپے مارے گئے ، ستر سے زائد افراد کے بیانات قلمبندکیے گئے جبکہ وزیراعظم نواز شریف نے ملزمان کی جلد ازجلد گرفتاری کا حکم دیدیا۔ ڈی آئی جی آپریشنزنے دعویٰ کیاہے کہ وہ ملزمان کے قریب پہنچ چکے ہیں اور جلد ملزمان قانون کے کٹہرے میں ہوں گے ، عوام تحمل سے کام لے ۔ تفصیلات کے مطابق گذشتہ دنوں زیادتی کا نشانہ بننے والی پانچ سالہ بچی ہوش میں آگئی ہے تاہم صدمے اورسرجری کی وجہ سے تاحال بول نہیں سکتی اور سروسز ہسپتال میں ہی زیرعلاج ہے ۔ مقامی میڈیا کے ایک اطلاع کے مطابق پولیس نے بچی کا بیان ریکارڈ کیاہے جس میں بچی نے بتایاکہ نامعلوم شخص اُسے اٹھاکرلے گیاتھالیکن وہ اُسے نہیں جانتی کہ وہ کون تھا؟ پولیس اور ڈاکٹروں نے تاحال کسی بیان کے ریکارڈ کرنے کی تردید کردی ۔ ڈاکٹروں نے بتایاکہ بچی کی حالت پہلے سے بہترہے لیکن ابھی بولنے کے قابل نہیں ۔ ایس پی امتیاز سرور نے بیان ریکارڈ کرنے کی تردید کرتے ہوئے کہاکہ بچی ابھی بولنے کی پوزیشن میں ہی نہیں ۔ سی سی پی اوشفیق احمد گجرنے بتایاکہ گذشتہ رات 70سے زائد افراد کے بیانات قلمبند کیے گئے ، مختلف مقامات پر چھاپے بھی مارے گئے جبکہ قریبی رشتہ داروں اور پڑوسیوں کو شامل تفتیش کرنے کا فیصلہ کرلیاہے ۔اُنہوں نے بتایاکہ ملزمان کے سامنے آنے پر بچی پہچان سکتی ہے ،کسی پر بھی شبہ ہواتوشامل تفتیش کریں گے ۔دوسری طرف چیف سیکرٹری اور آئی جی پنجاب نے اپنی رپورٹ وزیراعظم نواز شریف کو پیش کردی ہے ۔ پولیس نے بتایاکہ گنگارام ہسپتال سے سی سی ٹی وی فوٹیج حاصل کرلی ہے جس میں ایک شخص بچی کو چھوڑکر جاتے ہوئے دیکھاجاسکتاہے ۔ وزیراعظم نواز شریف نے ملزمان کی عدم گرفتاری پر برہمی کا اظہارکرتے ہوئے ملزمان کی فوری گرفتاری یقینی بنانے کا حکم دیدیا۔ پولیس نے اپنی ابتدائی تفتیشی رپورٹ میں بتایاکہ متاثرہ لڑکی اور اُس کے تین سالہ کزن کو شام چھ بجے اغواءکیاگیااور ساڑھے آٹھ بجے ہسپتال کے باہر چھوڑدیاگیا، ملزمان کی گرفتاری کیلئے دوٹیمیں تشکیل دے دی گئی ہیں اور ملزمان تک جلد پہنچ جائیں گے ۔دوسری طرف گرفتارکیے گئے پانچ مشتبہ ملزمان کو تفتیش کے بعد رہاکردیاگیاہے ۔راولپنڈی میں میڈیا سے گفتگومیں وفاقی وزیراطلاعات اور سینیٹرپرویز رشید نے کہاکہ لاہور زیادتی کیس کے ملزمان قانون کی گرفت سے بچ نہیں سکیں گے ، ایسے واقعات کسی صورت برداشت نہیں ۔اُنہوں نے کہاکہ وہ اُن کی بیٹی جیسی ہے جس کے ساتھ جرم ہوا، بیٹیوں کے مجرموں کو ماضی میں چھوڑا اور نہ آئندہ چھوڑیں گے ۔ گنگارام ہسپتال کے دورے کے بعد میڈیاسے گفتگو میں ڈی آئی جی آپریشنز رائے طاہر نے بتایاکہ پولیس کے پاس کافی شواہد ہیں اور ملزمان کے قریب پہنچ چکے ہیں لیکن تفتیش متاثرہونے کے خدشے کے باعث میڈیا سے کافی چیزیں شیئرنہیں کرسکتے ، اتناکہہ سکتے ہیں پولیس غافل نہیں ، ساری رات لگی رہی اور ملزم کی گرفتاری کے بعد ڈی این اے ٹیسٹ بھی کرائے جائیں گے ۔

مزید : لاہور /Headlines


loading...