ایرانی صدر اور کابینہ نے ”فیس بک“ کا سہارالے لیا

ایرانی صدر اور کابینہ نے ”فیس بک“ کا سہارالے لیا
ایرانی صدر اور کابینہ نے ”فیس بک“ کا سہارالے لیا

  


لندن (بیور ورپورٹ) ایرانی صدر حسن روحانی اور ان کی کابینہ نے سیاسی ایجنڈے کے فروغ کے لیے فیس بک اکاﺅنٹ کھول لیا۔ صدر روحانی کے فیس بک کے صفحے پر اب تک ستر ہزار افراد نے پسندیدگی کا اظہار کیا ہے جبکہ اس کے مقابلے میں ایرانی حکومت کے صفحے کو صرف 3 ہزار افراد نے پسند کیا ہے۔ حسن روحانی کے آنے کے بعد حکومتی سطح پر سوشل میڈیا اور عمومی ذرائع ابلاغ کے حوالے سے حیران کن واقعات سامنے آ رہے ہیں۔ نئے ایرانی صدر حسن روحانی نے گزشتہ ہفتے اپنے ٹوئٹر اکاﺅنٹ کے ذریعے میڈیا کو اس وقت ہلا کر رکھ دیا تھا جب ان کی طرف سے یہودیوں کو ان کے نئے سال کی مبارکباد کا پیغام بھیجا گیا۔ فیس بک کا یہ صفحہ صرف وہ لوگ دیکھ سکیں گے جن کے پاس انٹرنیٹ پر لگائے گئے فلٹر بریک کرنے کی سہولت ہوگی۔ کیونکہ ایران کے ذرائع ابلاغ پر سنسر سے متعلق سخت قوانین کے اطلاق کے باعث بہت ساری سائٹس بند کی جا چکی ہیں۔ ایران میں سوشل میڈیا پر 2009 میں اس وقت پابندی لگائی گئی تھی جب احمدی نڑاد کے دوسری بار انتخاب کی کوشش ہو رہی تھی اور احمدی مخالفین سوشل میڈیا کے ذریعے مظاہروں کو منظم کرنے کی کوشش کر رہے تھے۔ توقع کی جا رہی ہے کہ حسن روحانی کی وجہ سے ایران میں سوشل میڈیا کے حوالے سے نیا دور شروع ہو گا۔

مزید : سائنس اور ٹیکنالوجی


loading...