2017-18 کے دوران بھارت کی سویابین کی پیداوار میں 22 فیصد کمی کا امکان

2017-18 کے دوران بھارت کی سویابین کی پیداوار میں 22 فیصد کمی کا امکان

  

ممبئی (آن لائن)ماہرین نے کہا ہے کہ سیزن 2017-18 کے دوران بھارت کی سویابین کی پیداوار میں 22 فیصد کمی کا امکان ہے جس کی وجہ طویل خشک سالی کے باعث زیرکاشت رقبے میں کمی ہے۔صنعتی و زرعی ماہرین کی جانب سے جاری حالیہ جائزہ رپورٹ کے مطابق سیزن 2017-18 کے دوران بھارت کی سویابین کی پیداوار 9 ملین ٹن رہنے کا امکان ہے جبکہ سیزن 2016-17 کے دوران اس کی پیداوار 11.5 ملین ٹن رہی تھی۔ کاشتکاروں نے 10.5 ملین ہیکٹر رقبے پر سویابین کی کاشت کی ہے جو گزشتہ سیزن کے زیر کاشت رقبے سے 8.4 فیصد کم ہے۔

اس کی وجہ گزشتہ مہینوں میں خشک سالی اور سیزن 2016-17 کے دوران وافر فصل کے باعث کاشتکاروں کو ملنے والا نسبتا کم معاوضہ ہے۔کم پیداوار کے باعث بھارت کو آئندہ سال اس کی درآمد کرنا ہوگی جس پر قیمتی زر مبادلہ صرف ہوگا۔۔#/s#

مزید :

کامرس -