مولانا ابوتراب کی پراسرار گمشدگی حکومت اور ایجنسیوں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان،سافٹ امیج کرکٹ سے نہیں عوام کے جان ومال کے تحفظ سے ابھرے گا: سینیٹر ساجد میر

مولانا ابوتراب کی پراسرار گمشدگی حکومت اور ایجنسیوں کی کارکردگی پر سوالیہ ...
مولانا ابوتراب کی پراسرار گمشدگی حکومت اور ایجنسیوں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان،سافٹ امیج کرکٹ سے نہیں عوام کے جان ومال کے تحفظ سے ابھرے گا: سینیٹر ساجد میر

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے امیر سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ مولانا ابوتراب کی پراسرار گمشدگی حکومت اور ایجنسیوں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے، لوگوں کو اٹھا نا اور پھر انہیں غائب کردینا بیڈ گورنس کی شرمناک مثال ہے ،ریاستی اداروں کی انہی ناکامیوں کی وجہ سے انتہا پسندی اور دہشت گردی کو فروغ ملتا ہے ،سافٹ امیج کرکٹ سے نہیں عوام کے جان ومال کے تحفظ سے ابھرے گا۔

مزید پڑھیں:بھارت میں پناہ گزین روہنگیا مسلمان قومی سلامتی کے لئے سنگین خطرہ ،کسی صورت انڈیا میں رہنے کی اجازت نہیں دے سکتے :مودی حکومت کا سپریم کورٹ میں جواب

تفصیلات کے مطابق  کوئٹہ میں موجود مرکزی نائب امیر مولانا عبدالرشید حجازی سے ٹیلی فونک گفتگو کرتے ہوئے سینیٹر  پروفیسر ساجد میر کا کہنا تھا کہ مولانا ابوتراب کی بازیابی تک ہم چین سے نہیں بیٹھیں گے،کل جمعہ کے خطبات میں علماء بھرپور ردعمل کا اظہار کریں گے ،مولانا ابوتراب کا اغوا بلوچستان حکومت کی ناکامی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔انہوں نے کہا کہ  کوئٹہ میں مولانا ابوتراب کے اغوا کے خلاف کامیاب شٹر ڈاؤن ہڑتال کو الیکٹرانک میڈیا کا بلیک آوٹ کرنا افسوس ناک ہے ،میڈیا عوامی احساسات کا ترجمان ہو تا ہے، اسے اپنے فرائض ایمانداری اور صحافتی اصولوں کے مطابق انجام دینے چاہییں ۔

مزید :

قومی -