بداخلاقی کیس: مظفر گڑھ میں جماعت اسلامی خواتین ونگ کا واقعہ کیخلاف مظاہرہ

      بداخلاقی کیس: مظفر گڑھ میں جماعت اسلامی خواتین ونگ کا واقعہ کیخلاف ...

  

مظفرگڑھ (بیورو رپورٹ‘تحصیل رپورٹر‘ خبر نگار) جماعت اسلامی (حلقہ خواتین) کے تحت جیل روڈ مظفرگڑھ پرایک احتجاجی مظاہرہ کیا گیا، مظاہرہ موٹر وے پر خاتون کے(بقیہ نمبر33صفحہ6پر)

 ساتھ اجتماعی بد اخلاقی، خواتین اور بچیوں کے ساتھ پیش آنے والے اس قسم کے افسوس ناک واقعات کے خلاف کیا گیاہے،مظاہرے میں شریک خواتین نے ہاتھوں میں بینرز اور پلے کارڈ ز اٹھائے ہوئے تھے جن پر خواتین اوربچیوں کے ساتھ بد اخلاقی کے خلاف عبارات درج تھیں۔جماعت اسلامی خواتین نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ پورے ملک میں بچے، بچیوں اور خواتین کے ساتھ واقعات کے مجرموں سمیت موٹر وے کے حالیہ واقعے کے مجرموں کوکیفرکردار تک پہنچایا جائے، بچوں اور بچیوں اور خواتین کے ساتھ بد اخلاقی وقتل کے مجرموں کوقانونی تقاضے پورے کرتے ہوئے بِلاتاخیر سرِ عام پھانسی دی جائے۔ آئین ِ پاکستان کے آرٹیکل 35 کے مطابق شادی، خاندان،ماں اور بچے کی حفاظت کے حوالے سے ریاست اپنی ذمے داری پوری کرے، آئین کے آرٹیکل 37(g) کے مطابق حکومت عصمت فروشی، قمار بازی، ضرررساں ادویات کے استعمال، فحش لٹریچر اور اشتہارات کی طباعت، نشر و اشاعت اور نمائش کی روک تھام کے لیے ضروری اقدامات کرے۔ملک میں حیا کا کلچر عام کیا جائے، ان گھناؤنے اوراندوہناک واقعات کی روک تھام کے لیے وفاقی حکومت، صوبائی حکومتوں کے ساتھ روابط کے ذریعے پورے ملک میں ایسے اداروں، افراد کا سراغ لگائے جو فحاشی اور برائی پھیلارہے ہیں، فحش مواد اور فحاشی و عریانی کو فروغ دے رہے ہیں،ملک بھر میں فحاشی و عریانی پر مبنی مواد اور ایسے مواد کو فروخت کرنے، رواج دینے والے ذرائع اور ایسے ہمہ اقسام کے مواد کی خرید و فروخت پر مکمل پابندی عاید کی جائے۔ میڈیا پر ہیجان پھیلانے کے بجائے اسلامی اقدار کو فروغ دیا جائے، بچوں، بچیوں اور خواتین کے ساتھ زیادتی کے کیسز میں رہا شدہ مجرموں کا نام ای سی ایل میں ڈالاجائے اور اصل مجرموں کا سراغ لگانے کے لیے کیسز کو ری اوپن کیا جائے۔مظاہرے میں جماعت اسلامی (حلقہ خواتین مظفرگڑھ)کی ناظمہ رفعت اقبال اور صدر جے آئی یوتھ ریحانہ کوثر نے  اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہاکہ گزشتہ چند سال کے دوران بہت بڑی تعداد میں قوم کی بیٹیاں اور معصوم بچے تشدد کا شکار ہوئے اوربہیمانہ طریقے سے ان کی زندگیوں کا خاتمہ کیا گیا لیکن افسوس کہ حکومتیں اور انصاف فراہم کرنے والے ادارے نہ صرف ناکام ہوئے بلکہ مجرموں کو شک کی بنیاد پر ریلیف دیا گیا۔ یہی وجہ ہے کہ اس قسم کی وارداتوں میں روز بروز اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے۔

مظاہرہ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -