گوگڑاں: لینڈ ریکارڈ سنٹر منظور‘ عملہ بدستور غائب‘ دھکے عوا م کا مقدر

      گوگڑاں: لینڈ ریکارڈ سنٹر منظور‘ عملہ بدستور غائب‘ دھکے عوا م کا مقدر

  

گوگڑاں (نمائندہ پاکستان) تبدیلی سرکار کی طرف سے ملنے والا عوامی ریلیف لینڈ ریکارڈ افسران کی بے حسی کی نذر (بقیہ نمبر13صفحہ6پر)

ہوگیا جہانگیر خان ترین نے  ایم پی اے نذیر احمد خان بلوچ کی ڈیمانڈ پر ایک سال قبل گوگڑاں اور گیلے وال کی عوام کو ریلیف دینے کیلئے لینڈ ریکارڈ سنٹر کی منظوری دلائی مگر انچارج لینڈ ریکارڈ سنٹر نے ملازمین کے لینڈ ریکارڈ سنٹروں پر آرڈر ہونے کے باوجود بھی ملازمین کو تعینات نہیں کیا  عوام  روزانہ کی بنیاد پر انتقال کرانے کیلئے لودھراں سے نقل لے کر تیس کلو میٹر طویل سفر کرتے ہوئے گیلے والا میں چالان ادا کرتے ہیں اسی طرح راجہ پور سنٹر کی عوام بھی 40 کلو میٹر دور سفر کرکے چالان ادا کرنے کیلئے شہر میں آتے ہیں جس سے ایک دن کا کام تین دن تک پہنچ جاتا ہے ضلعی انتظامیہ کو چاہے کہ عوام  کے مسائل کم کرتے ہوئے فوری طور پر گیلے وال گوگڑاں سنٹر کو چالو کریں تاکہ عوام دھکے کھانے سے بچ سگے مگر عوام کا موقف ہے کہ ضلعی انتظامیہ کو عوام کی پریشانی سے کوئی غرض نہیں ہے انچارج لینڈ ریکارڈ  میاں وسیم آرائیں کو چاہے کے فوری طور پر عملہ کو اپنے سنٹروں پر بھیج کر کام شروع کر وائیں۔

مقدر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -