مقدس شخصیات کی توہین کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی: حافظ احمد علی 

مقدس شخصیات کی توہین کسی صورت برداشت نہیں کی جائے گی: حافظ احمد علی 

  

 کراچی (اسٹاف رپورٹر) جمعیت علما اسلام کے مرکزی ڈپٹی سیکرٹری جنرل حافظ احمد علی نے کہا ہے کہ پاکستان اسلام کے نام پر معروض وجود میں آیا اور اسلامی نظام کے لیے یہ خطہ حاصل کیا گیا بدقسمتی سے گزشتہ 70 سالوں میں اسلامی نظام تو نافذنہ ہوسکا لیکن اب کچھ ناعاقبت اندیش شخصیات نے صحابہ کرام کی شان میں گستاخیاں شروع کردی ہیں حال ہی میں پنجاب اسمبلی نے ایک بل منظور کیا جس میں رسول پاک امہات المومنات اور صحابہ کرام کی شان میں گستاخی کو جرم قرار دیا گیا ہے بل کی منظوری کے بعد کچھ افراد کی جانب سے انتہائی توہین آمیز کلمات ادا کیے گئے۔اس مرتبہ یوم عاشور پر کراچی میں صحابہ کرام کی شان میں گستاخانہ جملے ادا کیے گئے اور اسلام آباد حضرت ابوبکر صدیق کی تکفیر کی گئی ان افسوسناک واقعات سے ملت اسلامیہ میں غم وغصے کی لہر دوڑ گئی اور صحابہ کرام کی محبت میں پوری قوم سڑکوں پر نکل آئی اور کراچی میں 11 ستمبر کو کراچی میں عظمت صحابہ کانفرنس لاکھوں افراد کی شرکت نے یہ ثابت کردیا کہ صحابہ کرام کی توہین ان کے لیے ناقابل برداشت ہے اس کے دوسرے دن مفتی منیب الرحمن کی قیادت میں فقید المثال ریلی ہوئی۔انہوں نے کہا کہ مٹھی بھر گروہ کے گمراہ کن نظریات نے قوم کو متحد کردیا ہے اور یہ تحریک پورے ملک میں پھیل چکی ہے اور یہ تحفظ اسلام بل کی منظوری تک جاری رہے گی۔اس تحریک کی قیادت ڈاکٹر عادل کررہے ہیں اورسپریم کونسل کے سربراہ مولانا عبدالر?ف فاروقی ہیں آئندہ لائحہ عمل کے لیے سپریم کونسل کا اجلاس 17 ستمبر کو لاہور میں طلب کرلیا گیا ہے۔ حافظ احمد علی نے گستاخی کرنے والوں کی فوری گرفتاری اور انہیں قرار واقعی سزا دینے کا مطالبہ کیا۔

مزید :

صفحہ آخر -