کئی بار کہہ چکے ہیں دارالحکومت میں لاقانونیت ہے، ریاست کی رٹ بھی تو کہیں ہونی چاہئے، اسلام آبادہائیکورٹ میں کیس کی سماعت کے دوران ریڈ زون میں فائرنگ واقعہ کا تذکرہ 

کئی بار کہہ چکے ہیں دارالحکومت میں لاقانونیت ہے، ریاست کی رٹ بھی تو کہیں ہونی ...
کئی بار کہہ چکے ہیں دارالحکومت میں لاقانونیت ہے، ریاست کی رٹ بھی تو کہیں ہونی چاہئے، اسلام آبادہائیکورٹ میں کیس کی سماعت کے دوران ریڈ زون میں فائرنگ واقعہ کا تذکرہ 

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)اسلام آبادہائیکورٹ میں کیس کی سماعت کے دوران ایڈیشنل سیشن جج جہانگیر اعوان کے فائرنگ کے واقعہ پر چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہاکہ کئی بار کہہ چکے ہیں اس شہر میں لاقانونیت ہے ،ریاست کی رٹ بھی تو کہیں ہونی چاہئے ، ریاست بھی تو کسی چیز کی ذمہ داری لے ۔

نجی ٹی وی 92 نیوز کے مطابق ایڈیشنل سیشن جج جہانگیر اعوان کے فائرنگ کے واقعہ کی اسلام آبادہائیکورٹ میں گونج سنی گئی ۔چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ڈپٹی اٹارنی جنرل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہاکہ آپ نے دیکھا کل ریڈزون میں کیا ہوا؟، ریڈ زون میں ایک بندہ فائر کررہا ہے ،چاہے اس کی کوئی بھی وجہ ہو،ریڈ زون میں لڑائی کا دوسرا فریق بھی بااثر ہے ۔

چیف جسٹس اسلام آبادہائیکورٹ نے استفسار کیا کہ یہ تمام بڑے آدمی کمپرومائز کیوں کر جاتے ہیں؟ ،کبھی نہیں سنا کسی مہذب معاشرے میں ایسے کمپرومائز ہوتے ہیں ۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہاکہ کئی بار کہہ چکے ہیں اس شہر میں لاقانونیت ہے ،ریاست کی رٹ بھی تو کہیں ہونی چاہئے ،ریاست بھی تو کسی چیز کی ذمہ داری لے ۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -پنجاب -