میں تو کہیں نہیں تھا مگر تو کہاں گیا | اکبر معصوم |

میں تو کہیں نہیں تھا مگر تو کہاں گیا | اکبر معصوم |
میں تو کہیں نہیں تھا مگر تو کہاں گیا | اکبر معصوم |

  

سن! ہجر اور وصال کا جادو کہاں گیا

میں تو کہیں نہیں تھا مگر تو کہاں گیا

جب خیمۂ خیال میں تصویر ہے وہی

وہ دشت نا مراد وہ آہو کہاں گیا

بستر پہ گر رہی ہے سیہ آسماں سے راکھ

وہ چاندنی کہاں ہے وہ مہ رو کہاں گیا

جس کے بغیر جی نہیں سکتے تھے جا چکا

پر دل سے درد آنکھ سے آنسو کہاں گیا

پھر خاک اڑ رہی ہے مکان وجود میں

اے جان بے قرار وہ دل جو کہاں گی

اٹھی تھی دل میں یاد سی معصوم کیا ہوئی

چمکا تھا جو خیال میں جگنو  کہاں گیا

شاعر: اکبر معصوم

(شعری مجموعہ:بے ساختہ، سال اشاعت، 2018)

Sun ,  Hijr  Aor  Visaal    Ka    Jaadu    Kahan    Gaya

Main   To   Kahen   Nahen   Tha    Magar   Tu     Kahan    Gaya

Jab Khaima -e-Khayaal   Men    Tasveer    Hay    Bani

Wo    Dasht - e-  Muraad   ,   Wo    Aahoo    Kahan      Gaya

Bistar    Pe    Gir    Rahi    Hay    Siah    Aasmaan    Say   Raakh

Wo    Chaandni     Kahan   Hay  ,  Wo     Mah  Roo      Kahan        Gaya

Jiss    K    Baghir    Ji    Nahen   Saktay    Thay   ,  Ja    Chuka

Par    Dil    Say    Dard   ,    Aankh    Say    Aansoo    Kahan         Gaya

Phir    Khaak    Urr     Rahi    Hay    Makaan -e- Wajood    Men

Ay    Jaan -e- Beqaraar  ,   Wo    Dil     Joo    Kahan        Gaya

Uthi    Thi    Dil    Men   Yaad    Si   MASOOM    Kaya   Hui

Chamka    Tha    Jo    Khayaal   Men    Jugnu    Kahan    Gaya

Poet:Akbar Masoom

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -