دل کو گلزار کی مٹی سے بنایا ہوتا | اکبر معصوم |

دل کو گلزار کی مٹی سے بنایا ہوتا | اکبر معصوم |
دل کو گلزار کی مٹی سے بنایا ہوتا | اکبر معصوم |

  

دل کو گلزار کی مٹی سے بنایا ہوتا

یا سگِ یار  کی مٹی سے بنایا ہوتا

اتنا مشکل تو نہ ہوتا مرا جینا کہ مجھے

یوں نہ انکار کی مٹی سے بنایا ہوتا

کوزہ گر، کوزۂ  درویش بنانا تھا اگر

مجھ گہنگار  کی مٹی سے بنایا ہوتا

کاش تو نے کوئی ساتھی مری تنہائی کا

مرے آثار کی مٹی سے بنایا ہوتا  

ایک مدت سے یہ بے کار پڑی ہے معصوم

کچھ دلِ زار  کی مٹی سے بنایا  ہوتا

شاعر:اکبر معصوم

(شعری مجموعہ:بے ساختہ، سال اشاعت، 2018)

Dil     Ko    Gulzaar   Ki    Matti    Say    Banaaya    Hota

Ya Sag -e- Yaar     Ki    Matti   Say   Banaaya    Hota

Itna   Mushkill   To   Na    Hota    Mira   Jeena   Keh   Mujhay

Yun   Na   Inkaar   Ki    Matti   Say   Banaaya   Hota

Kooza   Gar!  Kaasa -e- Durvesh    Banaana   Tha   Agar

Mujh   Gunehgaar   Ki   Matti   Say   Banaaya    Hota

Kaash  Tu    Nay   Koi   Saathi   Miri   Tanhaai   Ka 

Meray   Asaar   Ki   Matti   Say   Banaaya    Hota

Aik   Muddat   Say   Yeh   Bekaar   Parri   Hay   MASOOM

Kuch   Dil -e- Zaar   Ki   Matti   Say Banaaya   Hota

Poet: Akbar   Masoom

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -