کیاخبر تھی کہ یوں زیاں ہوگا | اکبر معصوم |

کیاخبر تھی کہ یوں زیاں ہوگا | اکبر معصوم |
کیاخبر تھی کہ یوں زیاں ہوگا | اکبر معصوم |

  

کیاخبر تھی کہ یوں زیاں ہوگا

خواب دیکھوں گا اور دھواں ہوگا

عشق کرتے ہیں دیکھ لو ہم کو

حال ایسے نہ پھر بیاں ہوگا

اِک سفینہ بھرا ہوا خوں سے

دیکھنا خاک میں رواں ہوگا

تو نے رکھے تھے اپنے پھول یہاں

اب یہ پتھر ترا نشاں ہوگا

مجھ کو پروا نہیں ہے تیرے بعد 

وقت ہوگا تو رائگاں ہوگا

اِک ستارہ کہیں ہمارے لیے

اب بھی ہوگا ،مگر کہاں ہوگا

دل بھی معصوم خاک ہی نکلا

میں سمجھتا تھا آسماں ہوگا

شاعر: اکبر معصوم

(شعری مجموعہ:بے ساختہ، سال اشاعت، 2018)

Kaya   Khabar   Thi   Keh   Yun   Zayaan   Ho   Ga

Khaab   Dekhun   Ga   Aor   Dhuwaan    Ho   Ga

Eshq   Kartay   Hen   Dekh   Lo   Ham   Ko

Haal   Aisay   Na   Phir   Bayaan    Ho   Ga

Ik   Safeena   Bhara   Hua   Khoon   Ka

Dekhna   Khaak   Men   Rawaan    Ho   Ga

Mujh   Ko   Parwa    Nahen   Hay   Teray   Baad

Waqt   Ho   Ga   To   Raaigaan    Ho   Ga

Ik   Sitaara    Kahen   Hamaaray   Liay

Ab   Bhi   Go  ,  Magar   Kahan   Ho   Ga

Dil   Bhi   MASOOM    Khaak   Hi   Nikla

Main   Samjhta   Tha   Aasmaan    Ho   Ga

Poet: Akbar   Masoom

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -