ضروری نہیں خودکشی کیجیے | اکبر معصوم |

ضروری نہیں خودکشی کیجیے | اکبر معصوم |
ضروری نہیں خودکشی کیجیے | اکبر معصوم |

  

ضروری نہیں خودکشی کیجیے

ہماری طرح زندگی کیجیے

نہیں عشق آساں تو الجھن ہے کیا

جو سب کر رہے ہیں وہی کیجیے

کسی مہ رُو سے لپٹ جائیے

ذرا رُوح میں چاندنی کیجیے 

اگرنیند آتی نہیں رات بھر

تو خوابوں کی صورت گری کیجیے

وہ نازک بہت ہے سو ہدیہ اُسے

گلِ خواب کی پنکھڑی کیجیے

ہیں معصوم پہلے ہی دشمن بہت

ذرا دوستوں میں کمی کیجیے

شاعر: اکبر معصوم

(شعری مجموعہ:بے ساختہ، سال اشاعت، 2018)

Zaroori   Nahen   Khudkashi   Kijiay

Hamaari   Tarah   Zindagi   Kijiay

Nahen    Eshq   Asaan   To   Uljhan   Hay   Kaya

Jo   Sab   Kar    Rahay   Hen   Wahi   Kijiay

Kisi   Mah  Roo   Say   Lipat   Jaaiay

Zara   Rooh   Men   Chaandni   Kijiay

Agar   Neend   Aati   Nahen   Raat   Bhar

To   Khaabon   Ki   Sootrat   Gari   Kijiay

Wo   Naazuk   Bahut   Hay   So   Hadya   Usay

Gul -e- Khaab   Ki   Pankharri   Kijiay

Hen   MASOOM    Pehlay   Hi   Dushman   Bahut

Zar   Doston   Men   Kami   Kijiay

Poet: Akbar  Masoom

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -