یہ گردِ بادِ تمنا میں گھومتے ہوئے دن | امجد اسلام امجد|

یہ گردِ بادِ تمنا میں گھومتے ہوئے دن | امجد اسلام امجد|

  

یہ گردِ بادِ تمنا میں گھومتے ہوئے دن

کہاں پہ جا کے رکیں گے یہ بھاگتے ہوئے دن

غروب ہوتے گئے رات کے اندھیروں میں

نوید امن کے سورج کو ڈھونڈتے ہوئے دن

نہ جانے کون خلا کے یہ استعارے ہیں

تمہارے ہجر کی گلیوں میں گونجتے ہوئے دن

نہ آپ چلتے،نہ دیتے ہیں راستہ ہم کو

تھکی تھکی سی یہ شامیں یہ اونگھتے ہوئے دن

پھر آج کیسے کٹے گی پہاڑ جیسی رات

گزر گیا ہے یہی بات سوچتے ہوئے دن

تمام عمر مرے ساتھ ساتھ چلتے رہے

تمہیں کو ڈھونڈتے تم کو پکارتے ہوئے دن

ہر ایک رات جو تعمیر پھر سے ہوتی ہے

کٹے گا پھر وہی دیوار چاٹتے ہوئے دن

مرے قریب سے گزرے ہیں بارہا امجدؔ

کسی کے وصل کے وعدے کو دیکھتے ہوئے دن

شاعر: امجد اسلام امجد

(شعری مجموعہ:پسِ گفتگو )

Yeh    Gard -e-Baad  -e-Tamanna    Men   Ghoomtay    Huay   Din

Kahan    Pe   Ja   K   Ruken   Gay   Yeh   Bhaagtay   Huay    Din

Gharoob   Hotay   Gaey   Raat   K   Andhairon   Men

Naveed -e-Amn   K    Sooraj   Ko   Dhoodtay   Huay   Din

Najaanay   Kon   Khalaa   K   Yeh   Istaaray   Hen

Tumhaaray   Hijr   Ki   Galion   Men   Goonjatay  Huay   Din

Na   Aap   Chaltay ,   Na   Detay   Hen   Raasta   Ham   Ko

Thaki   Thaki   Si   Yeh   Shaamen   Yeh   Oonghtay   Huay   Din

Phir   Aaj   Kaisay   Kattay   Gi   Pahaarr   Jaisi   Raat

Guzar    Gaya   Hay   Yahi   Baat   Sochtay   Huay   Din

Tamaam   Umr    Miray   Saath   Saath   Chaltay   Rahay

Tumhi    Ko   Dhoondtay   Tumhi   Ko    Pukaartay   Huay   Din

Har   Aik    Raat   Jo   Tameer   Phir   Say   Hoti   Hay

Katay   Ga   Phir   Wahi    Dewaar   Chaattay   Huay   Din

Miray   Qareeb   Say   Guzray   Hen   Baarha    AMJAD

Kisi   K   Wasl    K    Waaday   Ko    Dekhtay    Huay   Din

Poet: Amjad    Islam    Amjad

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -