اپنے گھر کی کھڑکی سے میں آسمان کو دیکھوں گا | امجد اسلام امجد|

اپنے گھر کی کھڑکی سے میں آسمان کو دیکھوں گا | امجد اسلام امجد|
اپنے گھر کی کھڑکی سے میں آسمان کو دیکھوں گا | امجد اسلام امجد|

  

اپنے گھر کی کھڑکی سے میں آسمان کو دیکھوں گا

جس پر تیرا نام لکھا ہے اُس تارے کو ڈھونڈوں گا

تم بھی ہر شب دیا جلا کر پلکوں کی دہلیز پہ رکھنا

میں بھی روز اک خواب تمہارے شہر کی جانب بھیجوں گا

ہجر کے دریا میں تم پڑھنا لہروں کی تحریریں بھی

پانی کی ہر سطر پہ میں کچھ دل کی باتیں لکھوں گا

جس تنہا سے پیڑ کے نیچے ہم بارش میں بھیگے تھے

تم بھی اُس کو چھو کے گزرنا، میں بھی اُس سے لپٹوں گا

’’خواب مسافر لمحوں کے ہیں، ساتھ کہاں تک جائیں گے

تم نے بالکل ٹھیک کہا ہے، میں بھی اب کچھ سوچوں گا

بادل اوڑھ کے گزروں گا میں تیرے گھر کے آنگن سے

قوسِ قزح کے سب رنگوں میں تجھ کو بھیگا دیکھوں گا

رات گئے جب چاند ستارے لُکن میٹی کھیلیں گے

آدھی نیند کا سپنا بن کر میں بھی تم کو چھو لوں گا

بے موسم بارش کی صورت، دیر تلک اور دُور تلک

تیرے دیارِ حسن پہ میں بھی کِن مِن کِن مِن برسوں گا

شرم سے دوہرا ہو جائے گا کان پڑا وہ بُندا بھی

بادِ صبا کے لہجے میں اِک بات میں ایسی پوچھوں گا

صفحہ صفحہ ایک کتابِ حسن سی کھلتی جائے گی

اور اُسی کو لَو میں پھر میں تم کو اَزبر کر لوں گا

وقت کے اِک کنکر نے جس کو عکسوں میں تقسیم کیا

آبِ رواں میں کیسے امجدؔ اب وہ چہرا جوڑوں گا

شاعر:امجد اسلام امجد

(شعری مجموعہ:پسِ گفتگو )

Apnay    Ghar    Ki    Khirrki   Say    Main    Aasmaan   Ko   Dekhun   Ga

Jiss   Par   Tera   Naam   Likha    Hay   Uss   Taaray   Ko   Dekhun   Ga

Tum   Bhi   Har   Shab   Diya   Jala   Kar   Palkon   Ki   Dehleez   Pe   Rakhna

Main   Bhi   Roz   Ik   Khaab  Tumhaaray   Shehr   Ki   Jaanib   Bhaijun   Ga

Hijr   K    Darya   Men   Tum   Parrhna   Lehron   Ki   Tehreeren   Bhi

Paani   Ki    Har    Satr   Pe    Main    Kuch   Dil    Ki   Baaten   Likhun   Ga

Jiss   Tanha   Say   Pairr   K     Neechay   Ham   Baarish   Men   Bheegay  Thay

Tum   Bhi   Uss   Ko    Chhu    K    Guzarna  ,   Mmain    Bhi   Uss   Say   Liptun   Ga

"Khaab    Musaafir    Lamhon    K     Hen    ,   Saath   Kahan    Tak   Jaaen   Gay"

Tum    Nay   Bikul   Theek   Kaha   Hay  ,   Main   Bhi   Ab   Kuch   Sochun   Ga

Baadal    Aorrh    K   Guzrun   Ga   Main   Teray   Ghar   K   Aangan   Say

Qaos -e- Qazah   K    Sab   Rangon   Men   Tujh   Ko   Bheega   Dekhun   Ga

Raat   Gaey    Jab   Chaand    Sitaaray   Lukan    Meeti   Khailen    Gay

Aadhi   Neend   Ka    Sapna    Ban   Kar   Main   Bhi   Tum   Ko   Chhoo   Lun  Ga

Be    Mosam   Baarish    Ki    Soorat   Dair   Talak    Aor   Door   Talak

Teray    Dayaar -e-Husn   Pe   Main   Bhi   Kin   Min   Kin   Min   Barsun   Ga

Sharm    Say    Dohra   Ho   Jaaey    Ga   Kaan    Parra    Wo   Bunnda   Bhi

Baad -e- Sabaa   K    Lehjay    Men    Ik Baat Main     Aisi    Poochhun   Ga

Safha    Safha   Aik    Kitaab -e- Husn    Si    Khulti   Jaaey

Aor    Usi   Ko   Lao   Men    Phir   Main   Tum   Ko   Azbar   Kar   Lun   Ga

Waqt    K   Ik   Kankar    Nay   Jiss   Ko   Akson    Men   Taqseem   Kiya

Aab  -e- Rawaan    Men    Kaisay   AMJAD    Ab    Wo   Chehra    Jorrun   Ga

Poet: Amjad     Islam     Amjad

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -