نوشہرہ، جلوزئی حکیم آباد کے باشندے گھروں کی مسماری کیخلاف سراپا احتجاج 

نوشہرہ، جلوزئی حکیم آباد کے باشندے گھروں کی مسماری کیخلاف سراپا احتجاج 

  

 نوشہرہ (بیورورپورٹ) جلوزئی حکیم آباد کے سینکڑوں مکین اپنے مکانات کی مسماری اور اس پر PHA کی افسر شاہی کیلئے محلات کی تعمیر اتی منصوبے کے خلاف سراپا احتجاج، مکین سڑکوں پر نکل آئے, ہم کسی صورت اپنے مکانات مسمار کرنے نہیں دیں گے,غریبوں کے مکانات مسمار کرکے افسر شاہی کیلئے محلات تعمیر کئے جا رہے ہیں جو کہ وزیر اعظم عمران خان کے انتخابی منشور 50لاکھ گھروں کے منافی ہے ہمیں اپنے گھروں سے بے دخل کیا جارہا ہے وزیر اعظم پاکستان عمران خان، وزیر دفاع پرویز خان خٹک، وزیر اعلیٰ خیبر پختونخخواہ محمود خان اور ضلع نوشہرہ کی انتظامیہ نوٹس لیکر ہمیں اپنے گھروں سے بے دخل ہونے سے بچائیں بصورت دیگر ہم راست اقدام اٹھانے پر مجبور ہو جائیں گے اس سلسلے میں نوشہرہ کے علاقہ جلوزئی کے موضع حکیم آباد کے عمائدین حاجی حکیم خان، عبدالخالق، مولوی محمد افضل، سید بادشاہ، توصیف احمد، عبدالمالک اور محمد اقبال کی قیادت میں سینکڑوں نوجوانوں، سکولز، کالجز کے طلبا ء نے پی ایچ اے حکام کے خلاف نوشہرہ کینٹ شوبرا چوک میں احتجاجاً روڈ بلاک کر دی جو بعد ازاں نوشہرہ پریس کلب کے سامنے آئے اور احتجاج مظاہرہاور پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہمارا گاوں حکیم آباد جلوزئی 1978سے انتقال شدہ 90کنال رقبے پر آباد ہے جس کی کل آبادی تقریباً 2200افراد پر مشتمل ہے اور اس گاوں میں مساجد، سکولز  قبرستان، حجرے موجود ہیں اور یہاں کے مکین خوشحال زندگی بسر کررہے ہیں لیکن اے سی پبی پی ایچ اے حکام کی ایما پر نوشہرہ پولیس فورس کو استعمال کرکے ہمیں اپنے زاتی، ملکیتی مکانات سے بے دخل کرکے افسر شاہی کے لئے محلات تعمیر کر رہی ہے اور تو او ر تحصیل پبی کی اے سی صاحبہ علاقے کے عوام کو ڈرادھمکاکر اپنے حقوق سے دستبرداری کیلئے دباو ڈال رہی ہے انہوں نے مزید کہا کہ پی ایچ اے ہمارے گاوں پر قبضہ کرکے ہمیں دربدر کرنے اور ہمارے سروں سے چھت چھینے پر بضد ہیں لیکن ہمیں کسی صورت پی ایچ اے حکام کا غریب دشمن منصوبہ منظور نہیں کیونکہ اس منصوبے سے ہمارے بچوں کا  مستقبل تاریک ہونے کا خدشہ ہے جو ہمیں کسی صورت منظور نہیں اور اس منصوبے کے خلاف ہم کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے انہوں نے وزیر اعظم عمران خان، وزیر اعلیٰ محمود خان، وزیر دفاع پرویز خان خٹک اعلیٰ عدلیہ اور دیگر حکام سے داد رسی کی اپیل کی ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -