صادق آباد: وارداتوں میں اضافہ‘ تاجروں کا آئندہ ہفتے احتجاج کا اعلان 

صادق آباد: وارداتوں میں اضافہ‘ تاجروں کا آئندہ ہفتے احتجاج کا اعلان 

  

 صادق آباد(تحصیل رپورٹر) صادق آباد میں بڑھتی ہوئی  وارداتوں پر انجمن تاجران اور دیگر  تاجر تنظیموں کی طرف سے آئندہ ہفتے ڈی پی او آفس رحیم یارخان کے سامنے احتجاج کا اعلان کرتے ہوئے انجمن تاجران کے قائم مقام صدر میاں جاوید اقبال اور جنرل سیکرٹری میاں احسان الحق اسد کی صدارت میں انجمن کریانہ ایسوسی ایشن کے عہدیداران کا(بقیہ نمبر34صفحہ6پر)

 اجلاس  ہوا جس میں گزشتہ روز تھانہ صدر کی حدود میں ہونے والی  چائے کی سپلائی وین کو لوٹے جانے کی واردت سمیت سرکل بھر میں دیگر وارداتوں پر تشویش کا اظہار کیا گیااجلاس میں جنرل سیکرٹری انجمن کریانہ ایسوسی ایشن میاں انعام باری، حاجی خالد محمود سعیدی،میاں ظفر اقبال،چوہدری شہزاد خالق،میاں بلال مسعود،چوہدری جاوید فیروز،میاں شمس الحق، را کامران حنیف،حاجی عتیق الرحمن،معراج محمد خان،چوہدری آصف محمود،محمدعلی ملک چوہدری محمد عاطف،میاں عدنان جاوید سمیت دیگر تاجر رہنما موجود تھے تاجر رہنماں نے کہا کہ صادق آباد سرکل میں تسلسل کے ساتھ ڈکیتیوں،چوریوں کی وارداتیں جاری ہیں ڈی پی او رحیم یارخان کو بار ہا آگاہی کے باوجود تاجر برادری سمیت شہریوں کی جان و مال کے تحفظ کیلئے کوئی اقدامات نہ اٹھائے گئے پولیس عوام کی جان و مال کے تحفظ میں مکمل ناکام نظر آتی ہے تحصیل بھر میں  اغوا کی وارداتیں،تاجروں کے ساتھ ڈکیتیوں کی وارداتیں ہورہی ہیں،فلورملوں میں بھی ڈکیتی کی وارداتیں ہوئیں،جبکہ موٹر سائیکل چوری کی وارداتوں کا سلسلہ بھی مسلسل جاری ہے انھوں نے کہا کہ انجمن تاجران صادق آباد وارداتوں پر بھرپور احتجاج کرتی ہے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ  اگلے ہفتے ڈی پی او رحیم یارخان کے آفس کے سامنے احتجاج بھی کیا جائے گا جس میں صادق آباد کی تاجر برادری اور رحیم یارخان کے تاجروں کو بھی شامل کیا جائے گاانجمن تاجران صادق آباد کے رہنماؤں نے وزیراعظم پاکستان،وزیر اعلی پنجاب، آئی جی پولیس پنجاب، آر پی او بہاولپور  امن و امان کی سنگین صورتحال کا نوٹس لیتے ہوئے تحصیل صادق آباد میں تاجروں اور شہریوں کی جان و مال کے تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے فی الفور اقدامات اٹھانے کا مطالبہ کیا انجمن تاجران کے عہدیداروں نے اجلاس کے بعد شاہراہ پر ہاتھ کھڑے کرکے باقاعدہ احتجاج بھی ریکارڈ کروایا۔

چوری، اغوا

مزید :

ملتان صفحہ آخر -