کوہ سلیمان: سڑکوں کا نیاجال، منصوبوں پر 99کروڑ خرچ کرنے کا فیصلہ 

کوہ سلیمان: سڑکوں کا نیاجال، منصوبوں پر 99کروڑ خرچ کرنے کا فیصلہ 

  

  ڈیرہ غازیخان(سٹی رپورٹر)کمشنر سارہ اسلم نے محکموں کی فزیکل ویری فکیشن کے بعد کوہ سلیمان میں نئے 19 روڈز کے منصوبوں کی منظوری دے دی جن پر 99 کروڑ روپے خرچ ہوں گے کمشنر کی زیر صدارت ڈویژنل ڈویلپمنٹ ورکنگ پارٹی کا اجلاس منعقد ہوا جس میں ڈپٹی کمشنر ذیشان جاوید،ایڈیشنل کمشنر کوآرڈی نیشن خالد منظور،ڈائریکٹر ڈویلپمنٹ عبیدالرشید اور دیگر نے شرکت کی۔کمشنر سارہ اسلم نے(بقیہ نمبر43صفحہ7پر)

 متعلقہ افسران کے سکیموں کے باقاعدہ معائنہ اور تصدیق کے بعد کوہ سلیمان ڈویلپمنٹ اتھارٹی کی زیر نگرانی 19 روڈز کے نئے منصوبوں کی مشروط منظوری دے دی ہے۔پہاڑوں کو کاٹ کر 28 کلومیٹر طویل روڈز کی تعمیر پر 99 کروڑ روپے خرچ ہوں گے۔ڈیرہ غازی خان کے قبائلی علاقہ میں آٹھ اور تونسہ کے علاقہ میں 11 روڈز تعمیر ہوں گی۔کوہ سلیمان ڈویلپمنٹ اتھارٹی  کے منصوبے دو سال کے اندر مکمل ہوں گے۔کمشنر سارہ اسلم نے چھوٹی روڈز ایک سال کے اندر مکمل کرنے کی ہدایات جاری کردیں۔انہوں نے کہا کہ روڈز پر بارش کی پانی کی نکاسی کیلئے کاز وے،کل ورٹس تعمیر کی جائیں۔روڈز کے منصوبوں کی تکمیل سے آبادیوں کے مابین فاصلے سمٹ جائیں گے۔کمشنر سارہ اسلم نے افسران کو تنبیہ کی کہ سکیموں کی لاگت بڑھنے اور ترمیم کی اجازت نہیں ہوگی روڈز کے ساتھ پروٹیکشن وال، پہاڑوں کی سلوپ اور قبائلیوں کی آسانیاں دیکھی جائیں۔ روڈز کی کامیابی کیلئے مٹریل کے معیار کو یقینی بنایا جائے۔منصوبوں کی مدت تکمیل اور معیار پر ہرگز سمجھوتہ نہیں کیا جائے،کمشنر سارہ اسلم نے ڈویژنل ڈویلپمنٹ ورکنگ پارٹی کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے بستی سادات تا بغل چر،زیرو پوائنٹ تا شہید،لنگر سر تا نیل گاہ،گھوڑے مٹک تا ابا کوہ،پہاڑ سر تا بستی محمد اکبر،مین روڈ تا بستی دوست محمد،مین روڈ تا مٹ چانڈیہ،مین روڈ تا کورنجی ٹک،کڑی سر ٹک،نورگانی تا نل دف،تھل سر تا اک مار،مٹ چاکرانی تا ٹٹومار،سوڑے تا سب گھیرے وال اور دیگر روڈز کی  منظوری دے دی۔اجلاس میں ڈپٹی ڈائریکٹر ڈویلپمنٹ وسیم اختر جتوئی،اسسٹنٹ ڈائریکٹر محمد عدیل،سپرنٹنڈنٹ انجینئرز وقار احمد،ظفر حسین،شیخ اعجاز منظور،ایگزیکٹو انجینئرز امجد خان،اشفاق الرحمن، ڈی بی اے شہزاد قدیر اور دیگر موجود تھے دریں اثناء کمشنر سارہ اسلم نے ریونیو کے ماہانہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے چاروں اضلاع میں تعینات ریونیو افسران کا کارکردگی کا جائزہ لیتے ہو ئے کہا کہ سرکاری واجبات کی سوفیصد وصولی یقینی بنائیں ریونیو ریکوری میں تاخیر اور افسران کی عدم دلچسپی برداشت نہیں ہوگی کمشنر نے زیر التوا انکوائریز اور جوڈیشل کیسز نمٹانے کی ٹائم لائن دے دیں۔انہوں نے کہا کہ وراثتی انتقالات کے اندارج کے وقت ضروری جانچ پڑتال یقینی بنائی جائے۔کسی خاتون کو جائیداد محروم کرنے والے ریونیو افسر کے خلاف سخت کارروائی ہوگی۔وراثتی انتقالات کے اندراج میں غیر ضروری تاخیر برداشت نہیں ہوگی۔ڈیجیٹل گردآوری،اوور سیز پاکستانیوں کی درخواستوں پر عملدرآمد اور دیگر معاملات کا جائزہ لیا گیا۔اجلاس میں ڈپٹی کمشنر ذیشان جاوید،ایڈیشنل کمشنر کوآرڈی نیشن خالد منظور اسسٹنٹ کمشنر ریونیو محمد صفات اللہ،ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ریونیو احمد حسن رانجھا،پولیٹیکل اسسٹنٹ محمد اکرام ملک،اسسٹنٹ کمشنرز،تحصیلدار اور نائب تحصیلدار موجود تھے۔راجنپور،مظفر گڑھ اور لیہ کے ڈپٹی کمشنرز اور ریونیو افسران نے ویڈیو لنک کے ذریعے اجلاس میں شرکت کی بعد ازاں کمشنر سارہ اسلم کی زیر صدارت سالڈ ویسٹ مینجمنٹ کمپنی کا اجلاس منعقد ہوا جس میں چیف آفیسر و اسسٹنٹ کمشنر محمد اسد چانڈیہ نے بریفنگ دی۔ایڈیشنل کمشنر کوآرڈینیشن خالد منظور،اے سی جی حیات اختر،چیف کارپوریشن آفیسر ساجد ریاض اور دیگر شریک تھے۔شہر میں صفائی کے معاملات کی بہتری کا فیصلہ کیا گیا۔کمشنر سارہ اسلم نے کہا کہ ویسٹ منیجمنٹ کمپنی کے صفائی عملہ کو یونیفارم میں ملبوس کرکے تمام شفٹوں حاضری چیک کی جائے۔عملہ کو تنخواہوں کی ادائیگی  ان کی حاضری اور کارکردگی سے مشروط ہوگی۔کنٹینرز سمیت دیگر مشینری خریدنے اور افرادی قوت کی بھرتی کا عمل تیز کیا جائے۔عوام کی جائزہ شکایات کا فوری ازالہ کیا جائے۔شکایات سیل کو فعال کرکے درخواستوں اور عملدرآمد کا ریکارڈ مرتب کیا جائے۔کارپوریشن اور ویسٹ مینجمنٹ کمپنی ملکر میونسپل سروسز کی بہتری کیلئے کام کریں۔عوام کے مسائل کا بروقت حل اولین ترجیح ہونی چاہئے،کمشنر کو بریفنگ کے دوران بتایا گیا کہ کمپنی کیلئے منیجرز سمیت اہم 18 آسامیوں پر پی ٹی ایس کے ذریعے 19 ستمبر کو ٹیسٹ ہوگا۔دریں اثناحکومت پنجاب نے غیر قانونی سپیڈ بریکرز،قبضہ مافیا اور ناجائز منافع خوروں کے خلاف کریک ڈاؤن کا فیصلہ کیاہے کمشنر سارہ اسلم نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ڈپٹی کمشنرز اور اسسٹنٹ کمشنرز روزانہ صبح چھ بجے صفائی معاملات چیک کریں گے۔صفائی معاملات کا روزانہ کی بنیاد پر تصاویری ریکارڈ پیش کرنا ہوگا۔مین ہولز پر ڈھکن لگانے کی خصوصی مہم شروع ہوگی۔ بجلی، پانی،جانوروں کی چوری کی روک تھام کیلئے موثر پالیسی اپنانا ہوگی۔کسی بھی دفتر میں بدعنوان عناصر برداشت نہیں ہوں گے۔دفتری اوقات میں افسران اپنی موجودگی یقینی بنائیں۔عوام اور ماتحت عملہ کے ساتھ نامناسب رویہ برداشت نہیں ہوگا۔افسران عوام تک براہ راست رسائی مزید آسان بنائیں۔قبضہ مافیا کے خلاف کریک ڈاؤن اور رقبہ واگزاری کی ہفتہ وار رپورٹ پیش کی جائے۔مراکز صحت اور دیگر عوامی مقامات پر سروس ڈلیوری بہتر کی جائے۔علاوہ ازیں کمشنر سارہ اسلم نے ٹیچنگ ہسپتال کے اچانک دورہ کے دوران ایمرجنسی وارڈ میں ویسٹ سے بھری ڈسٹ بن،صفائی کی ناقص  صورتحال اور ماسک نہ پہنے والے افراد کی موجودگی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ایم ایس سے وضاحت طلب کرلی۔کمشنر نے میڈیکل ایمرجنسی کے مختلف شعبوں اور وارڈ کا تفصیلی معائنہ کیا۔انہوں نے ایم ایس کو ہدایات جاری کرتے ہوئے کہا کہ ٹیچنگ ہسپتال میں کورونا ایس او پیز پر سختی سے عمل درآمد کرایا جائے۔کمشنر سارہ اسلم نے داخل مریضوں کی عیادت کی۔ ہسپتال میں موجود طبی سہولیات کا جائزہ لیاکمشنر نے ڈاکٹرز،پیرامیڈیکل سٹاف اور مریضوں کے لواحقین سے معلومات بھی حاصل کیں۔کمشنر سارہ اسلم نے کہا کہ ہسپتال میں طبی سہولیات کی فراہمی میں کوتاہی برداشت نہیں ہوگی۔طب مسیحائی پیشہ ہے۔ڈاکٹرز اور پیرامیڈیکل سٹاف مریضوں کا بہتر علاج معالجہ کرکے دنیا اور آخرت کی زندگی سنواری جائے۔ داخل مریضوں کو ادویات مفت فراہم کی جائیں۔ڈاکٹرز اور پیرامیڈیکل سٹاف باقاعدہ یونیفارم میں ملبوس رہے۔اس موقع پر ایم ایس ڈاکٹر نجیب نے سہولیات اور متعلقہ معاملات پر بریفنگ دی۔مزید برآں ضلع ڈیرہ غازیخان کے پرائس کنٹرول مجسٹریٹس کی ڈپٹی کمشنر آفس میں دو روزہ تربیت کا آغاز کردیا گیا۔کمشنر سارہ اسلم نے افتتاحی سیشن کا جائزہ لیا۔ڈپٹی کمشنر ذیشان جاوید،ایڈیشنل ڈپٹی کمشنرز،اسسٹنٹ کمشنرز اور ضلع بھر کے پرائس کنٹرول مجسٹریٹ شریک تھے پراسیکیوشن برانچ کے افسران نے مجسٹریٹس کو قیمتوں کی چیکنگ،جرمانے،مقدما ت عدالتی کارروائی، گرانفروشوں،ذخیرہ اندوزوں اور ملاوٹ مافیا کو سزا دلانے کیلئے قانونی معاملات پر تربیت دی۔کمشنر سارہ اسلم نے کہا کہ پرائس کنٹرول   ایکٹ نے مجسٹریٹس کو بااختیار بنادیا ہے۔مجسٹریٹس اختیارات کا درست استعمال کرتے ہوئے قانون شکن عناصر کے خلاف موثر کارروائی کریں۔تربیتی سیشن سے زیادہ فائدہ حاصل کیا جائے اور تربیتی سیشن مناسب وقفہ کے بعد پھر منعقد کیا جائے۔ڈپٹی کمشنر ذیشان جاوید نے کہا کہ تربیتی سیشن میں تمام مجسٹریٹس شرکت یقینی بنائیں۔

سڑکوں کاجال

مزید :

ملتان صفحہ آخر -