تدرخواست کے قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے کے معاملہ پر فیصلہ محفوظ 

تدرخواست کے قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے کے معاملہ پر فیصلہ محفوظ 

  

 لاہور(نامہ نگارخصوصی)لاہورہائی کورٹ کے مسٹرجسٹس علی باقر نجفی نے حکومت کے زیرانتظام خصوصی عدالتوں میں ججوں کی تعیناتیوں اور تبادلوں میں حکومت کا اختیارختم کروانے کے لئے دائر درخواست کے قابل سماعت ہونے یا نہ ہونے کے معاملہ پر فیصلہ محفوظ کرلیا،میاں داؤد ایڈووکیٹ کی طرف سے دائر اس درخواست میں ایکس کیڈر کورٹس میں ججوں کی تعیناتیوں اور تبادلوں میں حکومتی کردار کے آئینی جواز کو چیلنج کیا گیاہے درخواست میں کہا گیا کہ ان عدالتوں میں ججوں کی تعیناتیوں، تبادلوں میں حکومتی مداخلت عدلیہ کی آزادی کے خلاف ہے،وفاقی حکومت نے لاہور ہائیکورٹ کی طرف سے احتساب عدالت کے ججوں کے تبادلوں پر اعتراض اٹھایا، وفاقی حکومت کا اعتراض اٹھانا عدالتی امور میں مداخلت اورعدلیہ کی آزادی پر حملہ ہے، آئین اور سپریم کورٹ کے فیصلے متعلقہ چیف جسٹس ہائیکورٹ کو عدالتی امور ریگولیٹ کرنے کا مکمل اختیار دیتے ہیں،حکومت کا خصوصی عدالتوں میں من پسند ججوں کی تعیناتی کا مطالبہ آئین کے فیئر ٹرائل کے اصول کے خلاف ہے، وفاقی حکومت مسلسل خصوصی عدالتوں کے جوڈیشل ورک میں مداخلت کر رہی ہے، خصوصی عدالتوں میں ججز کی تعیناتیوں، تبادلوں میں حکومت مداخلت غیرآئینی قرار دی جائے، خصوصی عدالتوں کے ججوں کے انتظامی، عدالتی امور لاہور ہائیکورٹ کے ماتحت کئے جائیں، وفاقی اور صوبائی حکومت کو خصوصی عدالتوں سے متعلق قوانین میں ترامیم کی ہدایت بھی کی جائے۔

فیصلہ محفوظ 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -