ایف پی اے: بجلی صارفین سے بڑا افراڈ، 30ارب روپے خاموشی سے نکلوانے کا منصوبہ 

ایف پی اے: بجلی صارفین سے بڑا افراڈ، 30ارب روپے خاموشی سے نکلوانے کا منصوبہ 

  

ملتان(وقائع نگار)وفاقی حکومت کا بجلی کے بلوں میں صارفین کو فیول ایڈجسٹمنٹ کی مد میں دی گئی رعایت پر تاریخی یوٹرن، صارفین کو ایک بار پھر تختہ مشق بنانے کی تیاریاں مکمل کرلیں جون کے بجلی بلوں میں 300 یونٹ تک استعمال کرنے والے صارفین کو دی گئی رعایت کی ایک ایک پائی واجبات و دیگر ذرائع سے وصول کرنے کا حتمی فیصلہ کرلیا گیا آئندہ ماہ بجلی بلوں کے ذریعے سابقہ رعایتی رقم ایک سے دو روپے فی یونٹ(بقیہ نمبر41صفحہ نمبر7)

 فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کے نام پر خاموشی سے 30 ارب روپے سے زائد کی وصول کرلی جائے گی ذرائع کے مطابق جون 2022 کے مہینہ میں بجلی کے فی یونٹ کی پیداواری قیمت 50 روپے سے تجاوز کر گئی جبکہ وفاقی حکومت نے مہنگی بجلی کا اضافی بوجھ فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کی مد میں میپکو سمیت ملک بھر کے صارفین پر 10 روپے فی یونٹ ڈالا دیا گیا جو اگست کے بلوں میں وصول کیا گیا ہے تاہم صارفین کی جانب سے حکومتی اس اقدام پر شدید ردعمل آنے پر حکومت کی جانب سے 200 یونٹ ماہانہ بجلی استعمال کرنیوالے صارفین کو فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ سے مستثنی قرار دیا بعد ازاں صارفین کے احتجاج پر حکومت نے یہ رعایت 200 سے بڑھا کر 300 یونٹ استعمال پر رعایت کا اعلان کردیا جس پر ملک بھر کے متوسط طبقے کی جانب سے اطمینان کا اظہار کیا گیا لیکن اگست کے کرنٹ بجلی کے بلوں میں فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کی مد میں ہزاروں روپے اضافہ نے صارفین کو ورطہ حیرت میں ڈال دیا ہے اور صارفین کے احتجاج کا نہ ختم ہونیوالا سلسلہ جاری ہے اور یہی سلسلہ میپکو کے تمام سب ڈویژن میں بھی دیکھا جارہا جبکہ میپکو حکام کی جانب سے صارفین کو یہ لالی پاپ دیا جارہا ہے کہ جن صارفین نے جون 2022 میں 300 یونٹ استعمال کیئے تھے حکومتی ریلیف فقط ان کے لیئے ہے، وفاقی حکومت نے صارفین کو 300 یونٹ پر دی جانیوالی رعایت پر یوٹرن لیتے ہوئے رعایت کی مد میں 30 ارب روپے وصولی کا حتمی فیصلہ کرلیا ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -