سیلاب نے جنوبی پنجاب کے تین اضلاع کو بُری طرح متاثر کیا، نقصان کا اندازہ لگانا باقی ہے!

سیلاب نے جنوبی پنجاب کے تین اضلاع کو بُری طرح متاثر کیا، نقصان کا اندازہ ...

  

شوکت اشفاق

سیلاب اور بارشوں سے تباہی کی نئی داستان رقم ہو رہی ہے وفاقی اور صوبائی حکومتیں بوجوہ بے بس نظر آتی ہیں خیبر پختونخوا، بلوچستان، جنوبی پنجاب اور سندھ کے متاثرین مایوس نظر آ رہے ہیں گو غیر سرکاری تنظیمیں اور مخیر حضرات ذاتی طور پر جمع کی گئی امدادی اور چندہ کی رقوم سے تباہ حال متاثرین کی اشک شوئی کی کوشش کر رہے ہیں لیکن وسائل کی کمی کے باعث اب بھی پانی میں گھرے خاندانوں تک پہنچ نہیں  پا رہے اس کی بنیادی وجہ ایسے علاقوں میں رسائی کا معاملہ ہے جہاں کچھ علاقے زمینی راستے کھو بیٹھے ہیں سفری اور بار برداری کیلئے رابطہ سڑکیں پانی میں بہہ گئی ہیں یا پھر ان پر سیلابی پانی موجود ہے ایسے میں ملک بھر میں سپلائی چین برے طریقے سے متاثر ہو چکی ہے ریلوے صرف روہڑ ی تک بحال ہو سکی ہے جبکہ باقی علاقوں میں رسائی ممکن نہیں رہی یہی وجہ ہے کہ پیٹرولیم مصنوعات کی ترسیل بند ہو کر رہ گئی ہے اور تقریباً پانچ سو سے زیادہ آئل ٹینکر سیلابی علاقوں میں پھنسے ہوئے ہیں اگر ان کیلئے سفر کا راستہ کلیئر نہیں ہوتا تو پٹرولیم مصنوعات کی قلت کا سامنا ہو سکتا ہے‘ اقوام متحدہ سمیت متعدد عالمی ادارے پاکستان میں حالیہ سیلاب کی تباہ کاریوں سے پریشان ہیں اسے عالمی حدت میں اضافے کی وجہ قرار دے رہے ہیں جس کیلئے وہ عالمی حدت (گلوبل وارمنگ) میں اضافے کا باعث بننے والے ممالک کو بھی خبردار کر رہے ہیں کہ ایسا سب کچھ ان کی پالیسیوں کا کیا دھرا ہے ان اداروں کی پاکستان میں ماضی کی حکومتوں کی طرف سے موسمیاتی تبدیلیوں کو سنجیدہ نہ لینا اور پھر اس مقصد کیلئے ملنے والے فنڈز کو کرپشن کی نظر کرنا بھی ایک بڑ ی وجہ قرار دیا جا رہا ہے یہی وجہ ہے کہ اس مرتبہ متاثرین کی امداد کیلئے فنڈز اور سامان فراہم کرنے والے عالمی ادارے حکومت پاکستان سے مطالبہ کر رہے ہیں کہ ضرورت کا امدادی سامان‘ خوراک اور بحالی کیلئے فراہم کیے جانے والے فنڈز کے سخت ترین آڈٹ کروائے جائیں تا کہ اس بات کا اطمینان حاصل کیا جا سکے کہ ضرورت مند متاثرین کی مدد ہو رہی ہے یہ دراصل نہ موجودہ بلکہ ماضی کی حکومتوں پر عالمی ڈونرز اداروں کا عدم اعتماد بھی ہے جس کیلئے ضروری ہے کہ اور کچھ نہیں تو کم از کم امدادی سامان کی ضرورت مندوں تک ترسیل کو ہی شفاف بنا لیا جائے اور بحالی کے کام کو سخت مانیٹر کیا جائے تاکہ حق داروں تک پہنچانے میں مدد مل سکے۔گو حکومتی اداروں نے ابھی تک سیلاب سے تباہ کاریوں کے نقصان کا صرف ابتدائی اندازہ لگایا ہے لیکن متعدد عالمی ادارے صرف سندھ میں ایک ارب 30کروڑ ڈالر سے زیادہ نقصان کا اندیشہ بتا رہے ہیں اس میں چاول،کپاس،اور گنے سمیت دوسری فصلیں شامل ہیں لیکن ان اداروں نے ابھی تک بلوچستان کو بالکل نظر انداز کررکھا ہے۔

 جنوبی پنجاب دامان،کوہ سلمان اور دوسرے علاقوں میں ہونے والی تباہیوں کا اندازہ لگانا ابھی باقی ہے کہ ان پہاڑوں اور رود کوہیوں کے سیلاب نے راجن پور، روجھان اور ڈیرہ غازی خان کو ڈبو دیا ان تک امداد  بھی نہیں پہنچ سکی اور یہاں احتجاج ہو رہا ہے، ان اضلاع کی بربادی بھی بااثر حضرات کی قبضہ والی کارروائیوں کے باعث ہے۔ مستقبل کے لئے سخت اقدامات کی لازم ہیں۔

اسی طرح خیبر پختون خوا میں ہونے والی تباہیوں کے نقصان کا ابھی تک اندازہ نہیں لگایا جاسکا۔جس کے بارے میں اقوام متحدہ کے ذیلی اداروں کا اندازہ ہے کہ بنیادی ڈھانچہ سمیت سڑکوں،پلوں اور فصلوں کی بربادی کو ملا کر جو نقصان ہوا ہے وہ 30ارب ڈالر سے بڑھ جائے گا انہی اطلاعات اور شواہد کی روشنی میں بین الا قوامی ادارے پاکستان کیلئے ایک طرف تو ترقی یافتہ ممالک اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈز اور بنکوں سے یہ مطالبہ بھی کررہے ہیں کہ پاکستان کے قرضوں کی ادائیگی کو کم ازکم دو سال کیلئے موخر کیا جائے۔  ادھراقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتوینو گو تریس نے سیلابی علاقوں کا دورہ کرتے ہوئے پاکستانی عوام کی طرف متاثرین کی مدد کے جذبے سے متاثر ہوئے اور تعریف کی اور کہا کہ پاکستان کا شمار دنیا کے ان چند ممالک میں ہوتا ہے جہاں کی عوام فلاحی کاموں میں بڑھ چڑھ کرحصہ لیتے ہیں، چاہے وہ زلزلے کی تباہی ہو یا سیلاب سے بے گھر ہونے والے افراد کی مدد، پاکستانی عوام ہمیشہ پیش پیش رہتے ہیں۔

پاکستان میں ہونے والی تباہ کن بارشوں اور سیلابی صورت حال کے پیش نظر بڑے پیمانے پر ہونے والے جانی و مالی نقصان کے بعد بھی پاکستان میں حکومت اور فلاحی اداروں کے علاوہ عوام بھی سیلاب متاثرین کی مدد میں پیش پیش نظر آئے جس کا اعتراف اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوتریس نے بھی سوشل میڈیا پر کیا۔سوشل میڈیا پر جاری پیغام میں انتونیو گوتریس نے لکھا کہ پاکستان میں سیلاب سے متاثرہ علاقوں کے لوگوں کے پاس گیا، ان کے پاس جو کچھ ہے وہ دوسروں کے ساتھ شیئر کر رہے ہیں، پاکستانی عوام کی موسمیاتی تبدیلیوں کی تباہی کے باوجود دوسروں کے ساتھ یکجہتی کی ایک اعلیٰ مثال ہے۔ لیکن دوسری طرف پاکستانی سیاستدان ماضی کی طرح بے کس متاثرین کی اشک شوئی کرنے کی بجائے جلسے،ریلیوں اور ضمنی انتخابات کے بخار میں مبتلا ہیں اور الزام تراشی پر مبنی بیانات آج بھی سیلاب کی تباہ کاریوں کی رپورٹ پر سبقت لیتے ہیں ضرورت ہوتو گزشتہ صرف ایک ہفتے کے اخبارات کے صفحہ اول اور آخر کی نیوز سٹوریز کی پلیس منٹ چیک کرلیں۔

کوہ سلمان اوررود کوہیوں کے متاثرین کا احتجاج، ان تک رسائی نہ ہوئی، امداد نہ ملی، نجی تنظیموں کی کارکردگی زیادہ بہتر رہی

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے حکومت اور پاکستان کے عوام کی تعریف کی، جذبہ کو سراہا! 

مزید :

ایڈیشن 1 -