آرمی چیف کی تقرری  یا توسیع کا آئینی اختیار وزیر اعظم کے پاس ہے  اور یہ اختیار موم کی ناک نہیں ،ساجد میر

آرمی چیف کی تقرری  یا توسیع کا آئینی اختیار وزیر اعظم کے پاس ہے  اور یہ ...
آرمی چیف کی تقرری  یا توسیع کا آئینی اختیار وزیر اعظم کے پاس ہے  اور یہ اختیار موم کی ناک نہیں ،ساجد میر

  

  لاہور,ریاض (وقار نسیم وامق ,سٹی رپورٹر) مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے سربراہ سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ آرمی چیف کی تقرری  یا توسیع کا آئینی اختیار وزیر اعظم کے پاس ہے  اور یہ اختیار موم کی ناک نہیں ہے جسے کسی ایک شخص کی خواہش پر جدھر مرضی موڑدیا جائے۔

تفصیلات کے مطابق ریاض میں مکتبہ دارالسلام میں استقبالیہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا کہ  عمران خان دوبارہ سلیکٹڈ وزیر اعظم بننے کے خواب دیکھ رہے ہی ،امریکہ کو گالیاں دینے والا اس کی جھولی میں بیٹھنے کے لیے بے تاب ہے۔ آرمی چیف کا تقرر اور عام انتخابات اپنے مقررہ وقت پر ہونگے۔متاثرین سیلاب کی بحالی اور انفراسٹرکچر کی تعمیر پر کم ازکم ایک سال لگ سکتا ہے۔ مولانا عبدالمالک مجاہد اور ڈاکٹر عبدالغفور راشد نے بھی  تقریب سے خطاب کیا،پروفیسر ساجد میر کا کہنا تھا کہ اقتدار کی ہوس میں عمران خان تقسیم پیدا کرنے کی کوشش کررہے ہیں ، ہمیں عراق، لیبیا کی مثال سامنے رکھنی چاہیے .

 امیر جمعیت اہل حدیث سینٹر پروفیسر ساجد میر کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان اور سعودی عرب کے مثالی مراسم ہیں یہی وجہ ہے کہ سعودی عرب نے ہر مشکل کی گھڑی میں پاکستان کا ساتھ دیا ہے ،پاکستان اس وقت سیلاب کی وجہ سے شدید مشکلات کا شکار ہے ملکی تاریخ میں اس سے بڑا سیلاب کبھی نہیں آیا اور سیلاب کے باعث ہزاروں افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں اور لاکھوں افراد بے گھر ہوچکے ہیں اس لئے اوورسیز پاکستانیوں کو اپنے ہم وطنوں کے لئے دل کھول کر مدد کو یقینی بنانا چاہئیے اور جس طرح خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی جانب سے پاکستان کے سیلاب زدگان کی مدد کی جا رہی ہے اس پر پوری قوم سعودی قیادت اور سعودی عوام کے شکر گزار ہیں.

مزید :

رپورٹر پاکستان -علاقائی -پنجاب -لاہور -تارکین پاکستان -