شیرشاہ کالونی مسائلستان بن گئی ،سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کاشکار ،جرائم سے حد بڑھ گئے

شیرشاہ کالونی مسائلستان بن گئی ،سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کاشکار ،جرائم سے حد بڑھ گئے
شیرشاہ کالونی مسائلستان بن گئی ،سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کاشکار ،جرائم سے حد بڑھ گئے

  

لاہور (چودھری حسنین/الیکشن سیل) حلقہ پی پی 160 میں واقع شیر شاہ کالونی میں جگہ جگہ گندگی کے ڈھیر ٹوٹی سڑکیں، ناقص سیوریج ،پینے کا گندا پانی، لوڈشیڈنگ، اور سٹریٹ کرائم کی وارداتوں سے مکینوں کو شدید پریشانیوں کا سامنا۔ شیر شاہ کالونی میں تمام سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں۔ کئی جگہ پر سڑکوں کا نام نشان ہی نہیں ہے۔ جگہ جگہ گندگی کے ڈھیر لگے ہوئے ہیں۔ ناقص سیوریج ی وجہ سے گٹروں سے گندا پانی باہر نکل رہا ہے۔ جس سے اہل علاقہ کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ اہل علاقہ کے رہائشی محمد وسیم چودھری کا کہنا تھا کہ یہاں پر بجلی کا تو کوئی ٹائم ہی نہیں ہے۔ 24 گھنٹوں میں بڑی مشکل سے 4 گھنٹے آتی ہے۔ محمد اسلم کا کہنا تھا کہ یہاں پر سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں ایک مین سڑک کی تعمیر جاری تھی وہ اب رک گئی ہے 3 سال گزرنے کے بعد بھی ابھی تک مین سڑک بھی مکمل نہیں ہو سکی۔ بشیر احمد کا کہنا تھاکہ یہاں پر سیوریج کا کوئی اتنا اچھا نظام نہیں ہے۔ کئی جگہ پر تو سیوریج کا نظام ہی نہیں ہے وہی نالیاں بنی ہوئی ہیں جو آئے دن بند رہنے کی وجہ سے پانی گلیوں میں آ جاتا ہے اور گزرنے والوں کے لئے مشکلات پیدا کرتا ہے۔ اور جن علاقوں میں سیوریج لگ گئے ہیں وہاں پر بھی اتنا اچھا نظام نہیں ہے ان کو بھی کتنے عرصہ سے صاف نہیں کیا گیا۔ محمد نذیر کا کہنا تھا کہ ایم این اے اور ایم پی اے جب الیکشن آتے ہیں تو ووٹ لینے کیلئے آ جاتے ہیں اور کہتے ہیں کہ آپ ہی ہمارا سب کچھ ہو آپ ہمارے والدین کے برابر ہو ہمیں ووٹ دو ہم علاقے میں یہ کروا دیں گے وہ کروا دیں گے۔ جھوٹے وعدے کرکے چلے جاتے ہیں اور جب الیکشن گزر جاتے ہیں اور وہ ایم پی اے یا ایم این اے کی کرسی پر بیٹھ جاتے ہیں تو ان کو ملنے کیلئے پورا پورا دن لگانا پڑتا ہے لیکن پھر بھی ان کے پاس ہمارے لئے وقت نکالنا بہت مشکل ہوتا ہے۔ چودھری نثار کا کہنا تھا کہ شیر شاہ کالونی میں سٹریٹ لائٹس کا تو کوئی نظام نہیں ہے۔ رات کو اندھیرا ہونے کی وجہ سے یہاں پر سٹریٹ کرائم بہت زیادہ ہو گئے ہیں آئے دن کوئی نہ کوئی ڈاکوﺅں کی بھینٹ چڑھا ہوتا ہے۔ لیکن پولیس بھی ان پر کنٹرول کرنے میں ناکام ہے ۔جمیل لودھی کا کہنا تھا کہ بجلی اور گیس کی لوڈشیڈنگ نے تو ہمارا جینا محال کردیا ہے۔ کیونکہ بجلی کی وجہ سے زندگی کا پہیہ چلنا ناممکن ہے کیونکہ آج کل ہر کام بجلی پر ہی کیا جاتا ہے۔ اور بجلی نہ ہونے کی وجہ سے نہ ہی کوئی کاروبار چل سکتا ہے۔ اور نہ ہی گھریلو ضروریات پوری ہو سکتی ہیں محمد امجد بھٹی کا کہنا تھا کہ کوئی بھی یہاں پر عوام کیلئے کچھ نہیں کرتا نئے لوگ بھی آتے ہیں سارے چور ہیں ملکی خزانے کو لوٹتے ہیں اور اپنے بینک بیلنس بڑھاتے ہیں۔عوام کیلئے آنے والی گرانٹوں سے علاقے کے کام کروانے کی بجائے اپنے محلوں کی تعمیر کرواتے ہیں اور غریب عوام ان کو کوستے رہتے ہیں لیکن عوام کی کوئی نہیں سنتا۔

مزید : الیکشن ۲۰۱۳