فن پہلوانی کے بغیر ہماری ثقافت ادھوری ہے ، محمد ندیم پہلوان

فن پہلوانی کے بغیر ہماری ثقافت ادھوری ہے ، محمد ندیم پہلوان

  



 لاہور( افضل افتخار ) فن پہلوانی ہماری ثقافت کا ایک اہم ستون ہے اور اس کے بغیر ہماری ثقافت ادھوری ہے لیکن افسوس کی بات یہ ہے کہ اس جانب کسی حکومت نے توجہ نہیں دی اور ماضی میں اس کھیل پر جتنی توجہ دی جاتی تھی اب اس کو فراموش کردیا گیا ہے ان خیالات کا اظہار نیشنل سٹائل ریسلنگ پاکستان کے چیئرمین محمد ندیم پہلوان نے روز نامہ پاکستان کے فورم میں اظہار خیال کرتے ہوئے کیا انہوں نے کہا کہ میں پندرہ سال سے اس کھیل سے منسلک ہو اور میں اپنے ملک پاکستان اور اپنے والدین کا نام روشن کرنا چاہتا ہوں میرے والدحمید پہلوان اور دادا کسی تعارف کے محتاج نہیں ہیں ہم آباؤ اجداد سے ہی فن پہلوانی سے منسلک ہیں اور اسی لئے اس کھیل کو پروان چڑھانا چاہتے ہیں او ر اس کیلئے اپنا بھرپور کردار بھی ادا کررہے ہیں انہوں نے کہا کہ میرے دادا اپنے دور میں پاکستان کے بہت بڑے پہلوان تھے اور ان کو ہندوستان کے تمام پہلوانوں کو شکست دینے کا بھی اعزاز حاصل ہے اور یہ نہ صرف ہمارے لئے بلکہ ہمارے ملک کے لئے بھی بہت بڑے اعزاز کی بات ہے انہو ں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ میں اس کھیل میں ماضی کی طرح ترقی کرنا چاہتا ہوں اور اس کی پذیرائی میرا مقصد ہے انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت تک یہ کھیل ترقی کی راہ پر گامزن نہیں ہوسکتا جب تک اس کھیل پر حکومتی توجہ نہیں ہوتی اور میری وزیراعظم پاکستان میاں نواز شریف اور وزیر اعلی پنجاب میاں شہباز شریف سے یہ اپیل ہے کہ وہ اس کھیل کی ترقی کے لئے اپنا بھرپور کردار اد ا کریں بلاشبہ حکومت بہت بڑے بڑے کام کررہی ہے ترقیاتی کام جاری ہیں لیکن اس کھیل کی ترقی پر بھی اسی طرح سے توجہ دینے کی ضرورت ہے اور جس طرح کرکٹ او ر ہاکی کو سپانسرز کی جاتا ہے اس کھیل کو بھی اس کی ضرورت ہے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ میں دعوی سے یہ بات کہہ سکتا ہوں کہ اگر اس کھیل پر توجہ دی جائے تو ایک مرتبہ دوبارہ پوری دنیا میں ہم اس کھیل میں اپنا نام روشن کرسکتے ہیں ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ پاکستان میں قائم اکھاڑوں کو ختم کردیا گیا اور ان کی جگہ بڑے بڑے ہوٹل اور دیگر عمارتیں قائم کردی گئی جو بہت غلط بات ہے اس لئے اب اس کھیل کو زندہ کرنے کے لئے ایک مرتبہ دوبارہ اکھاڑے قائم کئے جائیں۔

اور ان کی رونقیں بحال کی جائیں تاکہ ایک مرتبہ دوبارہ اس کھیل سے منسلک کھلاڑیوں کو ترقی کرنے اور اس کھیل میں اپنی صلاحیتوں کو اجاگر کرنے کا موقع مل سکے اور امید ہے کہ حکومت اس حوالے سے اپنا کردار کرے گی اور اس حوالے سے سنجیدگی سے کام کرے گی انہو ں نے کہا کہ اس کھیل میں بے پناہ ٹیلنٹ موجود ہے اور وہ ضائع ہورہا ہے انہوں نے کہا کہ ہم اس کھیل کو ایک مرتبہ دوبارہ زندہ کرنے کے لئے اپنا بھرپور کردار ادا کریں گے اور پاکستان کا ہر فورم پر نام روشن کرنا میرا مقصد ہے اس کھیل میں ترقی بہت ضروری ہے۔

محمدندیم پہلوان نے کہا کہ پاکستان میں اس کھیل کو دوبارہ زندہ کرنے کی ضرورت ہے اور اس کے لئے عملی اقدامات بہت ضروری ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ بحریہ ٹاؤن کے ریاض ملک جس طرح ملکی ترقی کے لئے اپنا کردار ادا کررہے ہیں ان کو اس جانب بھی توجہ دینے کی ضرورت ہے کیونکہ یہ ہمارا اپنا کھیل ہے جس پر مل جل کرکام کرنے کی ضر ورت ہے اور امید ہے کہ وہ بھی اس حوالے سے اس کھیل پر سرمایہ لگائیں گے تاکہ اس کھیل کو ترقی مل سکے۔

مزید : کھیل اور کھلاڑی