ماہ نور آج سے گوجرانواکہ میں شروع ہونے والے ڈرامہ’’ماہ نور مستانی‘‘ میں پرفارم کریں گی

ماہ نور آج سے گوجرانواکہ میں شروع ہونے والے ڈرامہ’’ماہ نور مستانی‘‘ میں ...

  



لاہور(فلم رپورٹر)فلم،ٹی وی اور سٹیج کی معروف اداکارہ و پرفارمر ماہ نور آج سے گوجرانوالہ میں شروع ہونے والے نئے ڈرامہ ’’ماہ نور مستانی ‘‘میں پرفارم کریں گی۔اس ڈرامہ کی کاسٹ میں کئی اور نامور فنکار شامل ہیں ۔’’پاکستان‘‘سے گفتگو کرتے ہوئے ماہ نور نے کہاہے کہ پاکستان میں خواتین کو ظلم برادشت کرنے کی عادت ہوچکی ہے بد قسمتی سے ہمارے ہاں جو حقوق مردوں کوحاصل ہیں عورتوں کو ان سے محروم رکھا جا تا ہے جبکہ اسلام نے عورت اور مرد کو برابرقرار دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ تعلیم یافتہ اور باشعور عورت کو ہر جگہ جنس اور نسلی معیار کا نشانہ بنایا جاتا ہے جو سخت زیادتی کے مترادف ہے جبکہ دیگر ممالک میں عورتوں کو مردوں سے زیادہ حق دیا جاتا ہے جس سے وہاں کی عورتوں کے اعتماد میں اضافہ ہوتا ہے اور ہمارے ہاں عورت کی حوصلہ افزائی کی بجائے حوصلہ شکنی کی جاتی ہے ۔ماہ نورنے کہاکہ ہم سب کو اپنے رویے کو پر نظر ثانی کرنی چاہیے اور معاشرے میں پیار محبت اور بھائی چارے کو فروغ دینا چاہیے تاکہ کسی کی حق تلفی نہ ہو ۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ میں تعداد کی بجائے معیار کو ترجیح دیتی ہوں ۔ صرف اچھااور پرفارمنس والا کردار قبول کرتی ہوں اور دھڑ دھڑاڈرامے حاصل کرنے کے سخت خلاف ہوں۔ انہوں نے کہاکہ نئے فنکاروں کو ٹی وی کے اکیڈمی کی حیثیت رکھنے والے فنکاروں کے تجربات سے بھرپور استفادہ کرنا چاہیے تاکہ ان کے کام میں خوبصورت اور نکھار آسکیں ۔۔ماہ نورنے کہا ہے کہ مفاد پرست لوگوں سے ہمیشہ دور رہتی ہوں کیونکہ شوبز میں ہر ہاتھ ملانے والا آپ کا دوست نہیں ہوتا ۔ انہوں نے کہا کہ آج کے مشینی دور میں دوست اور دشمن کی پہچان بڑی مشکل ہے اور اسی وجہ سے دوست کم بناتی ہوں ۔ انہوں نے کہا کہ تھیٹر اپنی روٹین کے مطابق جاری ہے اور وہی کچھ دکھایا جا رہا ہے جو عوام کی ڈیمانڈ ہے ۔ تھیٹر پر بلاوجہ سے تنقید ناجائز ہے ۔ ماہ نورنے کہا کہ تھیٹر سے ہزاروں لوگوں کا رزق وابستہ ہے اگر یہ بند ہو گیا تو بے شمار لوگ بے روزگار ہوں جائیں گے ۔ تمام فنکار تھیٹر کی ترقی کے لئے ہر دم دعا گو رہتے ہیں ۔

مزید : کلچر


loading...