ڈاکٹروں پر تشدد،عدالت نے ایس ایچ او شادمان سے رپورٹ طلب کر لی

ڈاکٹروں پر تشدد،عدالت نے ایس ایچ او شادمان سے رپورٹ طلب کر لی

  



لاہور( نامہ نگار)ایڈیشنل سیشن جج مظہر سلیم نے پنجاب انسٹیٹیوٹ آف کارڈیالوجی کی بدعنوانیوں کے خلاف احتجاج کرنے والے ڈاکٹروں پر تشدد کرنے والے ہسپتال کے پرنسپل ،ایم ایس اورپولیس اہلکاروں وغیرہ کے خلاف دائر درخواست پر ایس ایس پی آپریشنز اور ایس ایچ او شادمان سے رپورٹ طلب کر لی ہے۔ مذکورہ درخواست ڈاکٹر ثمرہ،ڈاکٹر جویریہ وغیرہ نے دائر کی ہے جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ درخواست گزاران پی آئی سی انتظامیہ کی کرپشن کے معاملات کی انکوائری نہ کرانے کے خلاف ہسپتال کے سامنے پرامن احتجاج کر رہے تھے کہ سادہ کپڑوں میں ملبوس پولیس اہلکاروں اور ایم ایس کی جانب سے بھجوائے گئے۔ افراد نے انہیں تشد دکا نشانہ بنانا شروع کر دیا۔انہوں نے خواتین ڈاکٹرز کو بالوں سے پکڑ کر سڑک پر گھسیٹا اور کوریج کے لئے آنے والے میڈیا کے نمائندوں کو بھی تشدد کا نشانہ بنایا۔

درخواست گزاران نے اس سلسلے میں ریس کورس پولیس سے رجوع کیا مگر ان کی کوئی شنوائی نہ ہو سکی۔درخواست میں استدعا کی گئی ہے کہ پر امن ڈاکٹرز کو تشدد کا نشانہ بنانے والے ہسپتال کے پرنسپل پروفیسر ڈاکٹر ندیم حیات ملک ،ایم ایس سہیل ثقلین ، ایس ایچ او شادمان اور دیگر کے خلاف مقدمہ درج کرنے کا حکم دیا جائے۔ فاضل عدالت نے اس درخواست پر ایس ایس پی آپریشنز اور ایس ایچ او ر شادمان سے25اپریل کو رپورٹ طلب کر لی ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4


loading...