لنڈی کوتل بازار کی بجلی 3 ماہ بعد بھی بحال نہ ہوسکی ،مکینوں کو مشکلات

لنڈی کوتل بازار کی بجلی 3 ماہ بعد بھی بحال نہ ہوسکی ،مکینوں کو مشکلات

  



خیبر ایجنسی(بیورورپورٹ)لنڈیکوتل بازار کی بجلی تین ماہ بعد بھی بحال نہیں ہو سکا تاجر برادری مشکلات سے دو چار بازار یونین اور واپڈا ایکسیئن کے درمیان کئی بار مذکرات ہو گئے لیکن کوئی مثبت پیش رفت نہیں ہو سکا ،بل جمع کرنے کے باوجود بھی بجلی کاٹ دی گئی جو سمجھ سے بالاتر ہیں ،تاجر برادری خیبر ایجنسی کی تحصیل لنڈیکوتل تاریخی بازار کا بجلی گزشتہ تین سے واپڈا نے بند کر دی ہیں جسکی وجہ سے لنڈیکوتل بازار کے ہزاروں دوکاندار شدید مشکلات سے دو چار ہو گئے ہیں تا جروں کا موقف ہے کہ وہ باقاعدگی سے بجلی کی بل جمع کر تے تھے لیکن اس کے باوجود بھی بجلی کا ٹ دی گئی انہوں نے کہا کہ بازار میں تقریبا 2200دوکانیں ہیں جس سے واپڈا ہر مہینے باقاعدہ سے بل وصول کر تے تھے بعض دوکانوں سے فیکس بل یعنی 150روپے وصول کرتے تھے جبکہ بعض دوکانوں سے میٹر پر بل وصول کر تے تھے اس میں زیادہ تر جو زیادہ بجلی استعمال کرتے تھے اس سے ہزاروں روپے بل کی مد وصول کرتے تھے جس کا باقاعدہ کوئی ریکارڈ موجود نہیں تھا اس سلسلے میں بازار یونین کے صدر لعل رحیم شنواری نے بتایا کہ ایکسئن واپڈا سے مذکرات کیلئے گز شتہ کئی دنوں سے اسسٹنٹ پولیٹکل ایجنٹ اور تحصیلدار کے دفتر کے چکر لگاتے ہیں لیکن نہ ایکسیئن واپڈا آتے ہیں اور نہ اسسٹنٹ پولیٹیکل ایجنٹ اور نہ تحصیلدار موجود ہو تا ہیں انہوں نے کہا کہ وہ مذکرات کیلئے ہر وقت تیار ہیں فوری طور پر بجلی بحال کریں تاکہ لنڈیکوتل تاجر مذید نقصان سے بچ سکیں جبکہ واپڈا زرائع نے بتایا کہ میٹر کے بغیر کسی صورت بجلی بحال نہیں کرینگے ایک ہفتے کے اند ر میٹر لگانے کام مکمل کر ینگے اسکے بعد بجلی بھی بحال ہو جائیگی انہوں نے کہا کہ میٹر تمام دوکانوں کو مفت لگا ئیں گے اور بازار کو اسپیشل لائن بھی دینگے اور لوڈشیڈنگ کا دورانیہ بہت کم ہو گا

مزید : پشاورصفحہ آخر