مردان میں ٹی ایم اے ملازمین کا نجکاری کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

مردان میں ٹی ایم اے ملازمین کا نجکاری کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

  



مردان ( بیو رورپورٹ) ٹی ایم اے ملازمین نے نجکاری کے فیصلے کو مسترد کرتے ہوئے دفاتر کو تالے لگائے اوراحتجاجی ریلی نکال کر پریس کلب کے سامنے احتجاجی جلسہ منعقد کیا ، فیصلہ واپس نہ لیا تو صوبائی حکومت کے خلاف احتجاجی تحریک شروع کی جائے ،معظم لاء فرم نے ملازمین کو مفت قانونی امداد فراہم کرنے کا اعلان کردیا تفصیلات کے مطابق بدھ کے روز ٹی ایم اے کے سینکڑوں ملازمین نے بازؤں پر سیاہ پیٹیاں باندھ رکھی تھیں اوروہ میونسپل کمیٹی سے کے ڈویژنل صدر محمد جان ،ضلعی صدر فرہادمحمد خیل ، جنرل سیکرٹری ملک امان بہرام خیل کی قیادت میں میونسپل کمیٹی سے روانہ ہوگئے اورشمسی روڈ پر مارچ کرتے ہوئے پریس کلب پہنچے جہاں ریلی نے جلسے کی شکل اختیار کی مظاہرین نے نجکاری کے خلاف شدید نعرہ بازی کی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے کہاکہ ہمیں اعتماد میں لئے بغیر حکومت سینٹیشن اور واٹر سپلائی سیکشن کو پرائیوٹ فرم کے حوالے کررہی ہے یہ فیصلہ ملازمین کا معاشی قتل عام ہے ان کاکہناتھاکہ بعض ملازمین اپ گریڈیشن سے محروم رکھے گئے ہیں جو سراسر زیادتی ہے بعدازاں پریس کانفرنس کرتے ہوئے معظم لاء فرم کے معظم بٹ ایڈوکیٹ اوربیرسٹر فیضان عزیز نے ٹی ایم اے عہدیداروں اور درجنوں ملازمین کے ہمراہ بلدیاتی ملازمین کو فری لیگل ایڈ فراہم کرنے کا اعلان کیا اورکہاکہ حکومت کا یہ اقدام دستور پاکستان کے منافی ہے حکومت نے ڈبلیو ایس ایس سی نامی کمپنی کو اختیارات دے کر ملازمین کے درمیان تفریق پیدا کی ہے انہوں نے کہاکہ حکومت نے ملازمین کو بھیڑ بکریاں سمجھ کر نامناسب سلوک روا رکھاہے جس کی قانون اجازت نہیں دیتا انہوں نے کہاکہ بلدیاتی ملازمین کی تنظیم سی بی اے یونین ہے اورقانونی طوپرکسی بھی فیصلے میں ان کو اعتماد میں لینا ضروری ہوتا ہے انہوں نے کہاکہ معظم لاء فرم بلدیاتی نمائندوں کے مسئلے کے حل کے لئے مذاکرات بھی کرے گا اور قانونی راستہ بھی اپنائے گا اوراس کے لئے وہ ہر فورم پر آواز اٹھائیں گے ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر


loading...