ہنگو ،امن کمیٹی کے رہنماء قاتلانہ حملہ میں زخمی ،حملہ آور گرفتار

ہنگو ،امن کمیٹی کے رہنماء قاتلانہ حملہ میں زخمی ،حملہ آور گرفتار

  

ہنگو(بیورورپورٹ) ہنگو مین بازار میں دن دھاڑے فائرنگ ۔ امن کمیٹی کے رہنماء ظہیر حسین شدید زخمی۔باڈی گارڈ کی فائرنگ سے حملہ آور بھی زخمی ہو کر گرفتار ۔ایک فرار ہونے میں کامیاب۔اچانک فائرنگ سے مین بازار میں بھگدڑ مچ گئی۔کاروباری مراکز سمیت کوہاٹ ہنگو جی ٹی روڈ بھی آمدورفت کے لئے بند۔واقعہ ہنگو کی پر امن حالات خراب کرنے کی ناکام سازش ہے۔عوام پر امن رہے ۔شیعہ سنی مشران اور علماء کرام کی زبردست باہمی ہم آہنگی۔تفصیلات کے مطابق ہنگو پولیس نے تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ جمعہ کے روز امن کمیٹی اورمصالحتی کمیٹی ہنگو کے رکن ظہیر حسین جو کہ اپنی گاڑی میں مین بازار سے گزر رہے تھے کہ اس دوران موٹر سائیکل پر سوار مسلح حملہ افراد نے ان کی گاڑی پر فائرنگ کر دی جس سے ظہیر حسین شدید زخمی ہوگئے جس کے بعد انہیں تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال ہنگو منتقل کر کے بعد ازاں مزید علاج معالجہ کے لئے پشاور ریفر کر دیا گیا۔جبکہ ظہیر حسین کے پرائیویٹ باڈی گارڈکی جوابی فائرنگ سے ایک حملہ آور جس کا نام رفیع اللہ بتایا گیا شدید زخمی ہو کر پولیس نے حراست میں لیکر ہسپتال منتقل کر دیا۔واقعہ کی اطلاع ملتی ہی پولیس کی باری نفری نے شہر کے تمام حساس مقامات کا گراؤ کر کے شہر میں امن وامان براقرار رکھنے اور کسی بھی نا کوشگوار واقعہ سے نمٹنے کے لئے سیکورٹی سخت کر دیں۔ادھر شہر میں اچانک رونما ہونے والے فائرنگ واقعہ پر شدید مزمت کا اظہار کرتے ہوئے شیعہ سنی مشران اور علماء کرام سنی سپریم کونسل کے سربراہ مولانا عبد الستار،خطیب اڈا مسجد ممتاز عالم دین مولانا عبد الجلیل و دیگر علماء کرام اور اہل تشیع کے ممتاز رہنماء سید حسین علی شاہ الحسینی نے واقعہ کو دہشت گردانہ کاروائی قرار دیتے ہوئے کہا کہ فائرنگ اور قاتلانہ کی ناکام کوشش ہنگو کی پر امن فضاء کو ایک سازش کے تحت خراب کرنا ہے جو کہ بزدلانہ اقدام ہے۔علماء کرام اور مشران نے کہا کہ ہنگو گزشتہ کچھ سال سے مشران ،علماء کرام،دونوں فریقین کے عمائدین،حکومت انتظامیہ اور فورسز کی مخلصانہ امن کوششوں سے پائیدار امن کی راہ ہموار ہوئی ہے اور دونوں فریقین باہمی ہم آہنگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے کسی کو بھی پر امن فضاء آلودہ کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔مشران نے حکومت ،انتظامیہ اور پولیس کے اعلیٰ حکام سے علاقہ مشران کو مناسب سیکورٹی فراہم کرنے کا بھی مطالبہ کیا۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -