مردان یونیورسٹی، مشال کے علاوہ وہ طالبعلم جس پر توہین کا الزام لگاکر بدترین تشدد کا نشانہ بنادیاگیا ، تہلکہ خیزانکشاف

مردان یونیورسٹی، مشال کے علاوہ وہ طالبعلم جس پر توہین کا الزام لگاکر بدترین ...
مردان یونیورسٹی، مشال کے علاوہ وہ طالبعلم جس پر توہین کا الزام لگاکر بدترین تشدد کا نشانہ بنادیاگیا ، تہلکہ خیزانکشاف

  

کراچی ، مردان(ڈیلی پاکستان آن لائن) مردان کی عبدالولی خان یونیورسٹی میں توہین رسالت کا الزام لگاکر قتل کیے جانیوالے مشال خان کیساتھ ایک اور طالبعلم کی موجودگی کا بھی انکشاف ہوا ہے جو تشدد سے بری طرح زخمی ہوکر ہسپتال پہنچ گیا۔

انگریزی جریدے ’ڈان ‘ نے لکھاکہ مردان یونیورسٹی میں ہونیوالے واقعے کی ویڈیو میں دیکھاگیا کہ ہجوم نے پہلے نوجوان کو برہنہ کیا اور اس کے بعد برہنہ جسم پر اینٹوں سے ماررہے ہیں ، ٹھڈے مارے گئے اور سنگساری کی گئی جبکہ اس دوران مذہبی نعرے لگائے جاتے رہے۔ 23سالہ مشال خان کیساتھ ایک اور طالبعلم پر بھی اسی وجہ سے حملہ کیاگیا جس کے نتیجے میں وہ بری طرح زخمی ہوگیا تاہم اس کے بارے میں مزید تفصیلات معلوم نہیں ہوسکیں۔

دوسری طرف مشال خان کے قتل کے الزام میں گرفتار 8 ملزمان کو جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کر دیا گیا، ملزمان کو انتہائی سخت سیکیورٹی میں انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیش کیا گیا اور پولیس کی جانب سے ملزمان کے جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی گئی۔ عدالت نے پولیس کی درخواست منظور کرتے ہوئے 8 ملزمان کو 4 روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا۔

مزید :

قومی -