فیکٹری ایریا سے گرفتار ہونے والی خاتون دہشت گرد حیدر آباد سے 2 ماہ قبل لاپتا ہونے والی نورین لغاری نکلی ،زیر حراست خاتون نے گھر والوں کو پیغام دیا تھا کہ وہ خلافت کی سرزمین پر پہنچ چکی ہے

فیکٹری ایریا سے گرفتار ہونے والی خاتون دہشت گرد حیدر آباد سے 2 ماہ قبل لاپتا ...
فیکٹری ایریا سے گرفتار ہونے والی خاتون دہشت گرد حیدر آباد سے 2 ماہ قبل لاپتا ہونے والی نورین لغاری نکلی ،زیر حراست خاتون نے گھر والوں کو پیغام دیا تھا کہ وہ خلافت کی سرزمین پر پہنچ چکی ہے

  

لاہور(ڈیلی پاکستان  آن لائن) فیکٹری ایریا سے گرفتار ہونے والی خاتون دہشت گرد کی شناخت ہوگئی ، گرفتار لڑکی حیدر آبا د سے  داعش میں شامل ہونے کے لئے گھر سے لاپتا ہونے والی نورین لغاری نکلی ،حساس اداروں نے بڑی کارروائی کرتے ہوئے پنجاب سوسائٹی میں کئے جانے والے  آپریشن کے زریعے ایک دہشت گرد کو ہلاک جبکہ نورین لغاری کو حراست میں لیا گیا تھا ۔

ایسٹر کے موقع پر لاہور میں دہشت گردی کی بڑی کوشش ناکام، سیکیورٹی فورسز کا خصوصی آپریشن، ایک دہشت گرد ہلاک، خاتون گرفتار

نجی ٹی وی  کے مطابق تھانہ فیکڑی ایریا کے علاقے پنجاب سوسائٹی میں حساس اداروں نے خفیہ اطلاع پر دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کیا جس میں ایک دہشت گرد ہلاک جبکہ اس کی خاتون ساتھی کو گرفتار کر لیا تھا ،  مبینہ طور پر داعش میں شامل ہونے کے لئے 10 فروری کو  لاپتا ہونے والی لیاقت یونیورسٹی میڈکل کی سیکنڈ ائیر کی طالبہ نورین لغاری کے طور پر شناخت کی گئی ہے ، حراست میں لی گئی دہشت گرد خاتون کے والد جامشورہ یونیورسٹی میں پروفیسر ہیں، بتایا گیا ہے کہ خاتون نورین لغاری دو ماہ سے پنجاب سوسائٹی میں رہائش پذیر تھی جبکہ یہ ایسٹر کے موقع پر بڑی کارروائی کی منصوبہ بندی کر رہے تھے کہ حساس اداروں نے بروقت کارروائی کرئے ہوئے لاہور کو بڑی تباہی سے بچالیا ۔دوسری طرف اطلاعات ہیں کہ  مبینہ طور پر گرفتار ہونے والی خاتون دہشت گرد حیدر آباد سے دو ماہ قبل لاپتا ہونے والی  سیکنڈ ائیر کی وہی طالبہ ہے جس کے بارے میں اطلاعات تھیں کہ وہ انتہا پسند تنظیم داعش میں شامل ہونے کے لئے شام روانہ ہو گئی ہے ۔ یاد رہے کہ حیدر آباد سے لاپتا ہونے کے بعد نورین لغاری نے اپنے گھر والوں کو پیغام دیا تھا کہ وہ  اللہ کے فضل سے خلافت کی زمین پر خیریت سے پہنچ گئی ہے،جبکہ اس کے گھر والوں کا کہنا تھا کہ اس کی بہن داعش میں شامل ہونے کے لئے نہیں گئی اسے اغوا کیا گیا ہے ۔دوسری طرف اس کے والد کا موقف  تھا  کہ نورین نمازی پرہیز گار ضرور تھی مگر اُس کی سوچ انتہاء پسند نہیں، وہ 10 فروری کو معمول کے مطابق پوائنٹ میں بیٹھ کر یونیورسٹی گئی تاہم واپس نہ آئی، خدشہ ہے کہ اُسے اغوا کرلیا گیا ہے ۔نجی ٹی وی کے مطابق سیکیورٹی اداروں کو نورین کے قبضے سے اس کے والد کا آئی ڈی کارڈ اور یونیورسٹی کا تعلیمی کارڈ بھی ملا ہے ۔دوسری طرف نورین لغاری کے بھائی کا کہنا ہے کہ وہ نہیں جانتے کہ نورین لغاری کہاں اور کس حال میں ہے ،ہم اب بھی یہی کہتے ہیں کہ وہ داعش میں شامل ہونے کے لئے نہیں گئی بلکہ اسے اغوا کیا گیا ہے ۔واضح رہے کہ  نورین لغاری 10 فروری کو خود نجی بس میں بیٹھ کر لاہور روانہ ہوئی، اس کے فیس اکاؤنٹ پر انتہا پسندانہ مواد موجود تھاجس پر فیس بک کی انتظامیہ نے اس کا اکاؤنٹ بھی بند کردیا تھا،جبکہ حساس اور سیکیورٹی ادارے نورین کی پراسرار گمشدگی کے بعد اس کی تلاش میں کافی سرگرم تھے ۔

مزید :

لاہور -اہم خبریں -