تقریب کے دوران قتل ہونیوالی گلوکارہ ثمینہ سندھوکا شوہر بھی کھل کر سامنے آگیا، اندر کی بات بتادی

تقریب کے دوران قتل ہونیوالی گلوکارہ ثمینہ سندھوکا شوہر بھی کھل کر سامنے ...
 تقریب کے دوران قتل ہونیوالی گلوکارہ ثمینہ سندھوکا شوہر بھی کھل کر سامنے آگیا، اندر کی بات بتادی

لاڑکانہ (ڈیلی پاکستان آن لائن) تقریب کے دوران کھڑے ہوکر  گانے میں دیر کرنے پر قتل ہونیوالی گلوکارہ ثمینہ سندھو کے شوہر بھی کھل کر سامنے آگئے اور انکشاف کیا کہ وہ خود بھی ہارمونیم بجاتے ہیں اور تقریب کے دوران گلوکارہ کے پیچھے ہی بیٹھے تھے، کھیتوں میں ہونیوالی اس تقریب میں مقامی ایس ایچ او بھی موجود تھا جو خود بھی نشے سے چور تھا ،  نیازجونیجو جو کہ سیشن جج کا ریڈر ہے،میری بیوی سے کہا کہ اٹھ کر گانا گاؤ اور رقص کرو، طبیعت خراب ہونے کی بنا پراس نےانکار کیا لیکن پھر اٹھنے لگی تونشے میں دھت نیاز جونیجو نے اپنے ساتھ بیٹھے طارق جتوئی کو اکسایا کہ اس نے میری بات نہیں مانی اور تم یونہی بیٹھے ہو اور یہ سنتے ہی   طارق جتوئی نے اچانک اٹھ کر تین فائرکیے جن میں ایک گولی ثمینہ کے سینے کے آرپارہوگئی۔

سماء ٹی وی کے مطابق  مقتولہ ثمینہ سندھو کے شوہرعاشق سموں نے تمام تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ میں اسٹیج پر اپنی بیوی کے پیچھے بیٹھا تھا۔ میرا کام ہارمیونیم بجانا ہے۔ پرفارمنس کے دوران نیازجونیجو جو کہ سیشن جج کا ریڈر ہے،میری بیوی سے کہا کہ اٹھ کر گانا گاؤ اور رقص کرو، طبیعت خراب ہونے کی بنا پراس نےانکار کیا۔ پھر اٹھنے لگی تونشے میں دھت نیاز جونیجو نے اپنے ساتھ بیٹھے طارق جتوئی کو اکسایا کہ اس نے میری بات نہیں مانی اور تم یونہی بیٹھے ہو۔

عاشق سموں کے مطابق طارق جتوئی جونیازجونیجو کا قریبی دوست ہے،ایسا سن کراس نے اچانک اٹھ کر تین فائرکیے جن میں ایک گولی ثمینہ کے سینے کے آرپارہوگئی۔ ہم ثمینہ کواسپتال لیکر گئے تو ہماری ٹیم میں شامل موسیقار وہیں رہ گئے جنہیں پولیس نے مارا پیٹا اور 35 ہزار روپے بھی چھین لیے۔

مقتولہ کے شوہرنےانکشاف کیا کہ مذکورہ پروگرام تھانے کے بالکل پیچھے واقع زمینوں پر ہو رہا تھا اور کنگا تھانے کا ایس ایچ اولیاقت علی بھی وہیں موجود تھا جو کہ خود بھی نشے میں تھا۔ پولیس کے سامنے ہماری کوئی شنوائی نہ ہوئی تو ہم میت کو رات کے 2 بجے ایس پی کے دروازے کے سامنے رکھ کربیٹھے، نوٹس نہ لینے پر دوپہر کو میت پریس کلب کے سامنے رکھ کر بیٹھے لیکن اس کے باوجود ایس پی نے رابطہ کیا نہ ایف آئی آردرج نہ کی گئی۔ بعد میں میڈیا پر خبرآنے کے بعد آئی جی سندھ نے نوٹس لیا تو ایس پی تنویرتنیو نے ایس ایچ اوکو معطل کردیا۔

عاشق سموں نے الزام عائد کیا کہ ڈی ایس پی نے اپنے دفتر میں بلا کر ایف آئی آر کٹوائی تو میں نے اپنے بیان میں بتایا کہ نیاز جونیجو نے طارق جتوئی کو اکسایا تھا لیکن پولیس نے ایف آئی آر میں نیاز جونیجو کا نام نہیں شامل کیا۔ طارق جتوئی نے بھی اپنے بیان میں نیاز جونیجو کا نام لیا لیکن پشت پناہی ہونے کی بنا پولیس نیاز جونیجو کا نام سامنے نہیں آںے دے رہی۔ طارق جتوئی نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ میں نشے میں نہیں تھا لیکن نیاز جونیجو نے مجھے ایسا کرنے کیلئےکہا۔ ایف آئی آر میں تیسرا نامعلوم ملزم وہ ہے جس کے پستول سے فائرنگ کی گئی۔

مزید : جرم و انصاف /علاقائی /سندھ /لاڑکانہ

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...