بلوچستان میں طوفانی بارشیں، ریلے میں بہہ جانیوالے 4افراد کی لاشیں نکال لی گئیں

بلوچستان میں طوفانی بارشیں، ریلے میں بہہ جانیوالے 4افراد کی لاشیں نکال لی ...

کوئٹہ،خیر پور، راولپنڈی(این این آئی،مانیٹرنگ ڈیسک،آن لائن) بلوچستان میں طوفانی بارشوں نے تباہی مچاد دی ، بوستان میں ریلے میں بہہ جانے والے چار افراد کی لاشیں نکال لی گئیں جبکہ پاک فوج نے بولان کے پہاڑی سلسلے میں سیلاب میں پھنسنے والے ڈیڑھ سو سے زائد ہندو یاتریوں کو ریسکیو کر لیا۔میڈیا رپورٹ کے مطابق بلوچستان میں طوفانی بارشوں نے تباہی مچاد دی ، بوستان میں بہہ جانیوالے 3 بچوں سمیت 4 افراد کی لاشیں کو نکال لی گئیں۔پی ڈی ایم اے کے مطابق بلوچستان میں بارش کا نیا سسٹم داخل ہوگیا، ڈیرہ بگٹی سمیت مختلف علاقوں میں تیز بارش سے ندی نالوں میں طغیانی آگئی۔ پی ڈی ایم اے کے مطابق کوئٹہ،ژوب، موسیٰ خیل، قلعہ سیف اللہ، لورالائی، قلعہ عبداللہ، تربت سمیت دیگر علاقوں میں آندھی کے ساتھ تیز بارش ہو گی۔بارش کا طوفانی اسپیل تین روز تک جاری رہے گا جس سے سیلابی ریلوں کے مزید بپھرنے کا خدشہ ہے، لوگ تفریحی مقامات کا رخ نہ کریں۔ ادھر بولان کے پہاڑی سلسلے میں سیلاب میں پھنسنے والے ڈیڑھ سو سے زائد ہندو یاتریوں کو ریسکیو کر لیا گیا۔ صوبائی مشیر دنیش کمار نے بتایا کہ تمام افراد کو پی ڈی ایم اے کیمپ منتقل کردیا گیا۔مقدس مقامات کی زیارت کے لیے جانے والے ہندو یاتری شدید بارش کے بعد دو روز سے بولان کے پہاڑی سلسلوں میں سیلابی ریلے کے باعث پھنسے ہوئے تھے۔پاک فوج کے تعلقات عامہ کے شعبے( آئی ایس پی آر )کے مطابق ہندو یاتری ناگاؤ پہاڑی کے علاقے میں اپنے مقدس مقدمات کی زیارت کیلئے جا رہے تھے کہ سیلاب پانی میں پھنس گئے ،پاک فوج نے ریسکیو آپریشن کرکے شوران میں سیلاب میں پھنسے 150 ہندو یاتریوں کو بچالیا،آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی ہیلی کاپٹرزکا امدادی آپریشن 36 گھنٹے جاری رہا،یاتریوں کی آبائی علاقوں میں محفوظ منتقلی کے انتظامات کئے جا رہے ہیں۔ یاتریوں نے مد دپر سکیورٹی فورسز اور سول انتظامیہ کا شکریہ ادا کیا ،پاک فوج ،ایف سی ،بلوچستان لیویز نے سول انتظامیہ سے ملکرامدادی آپریشن کیا۔پشین، زیارت، ہرنائی، موسیٰ خیل، شیرانی، قلعہ عبداللہ، قلعہ سیف اللہ، برشور، لورالائی، خانوزئی، مسلم باغ، توبہ اچکزئی، توبہ کاکڑی، کوڑک ٹاپ، کوہ خواجہ عمران میں کہیں کہیں بارش اور کہیں ڑالہ باری ہوئی جس سے فصلوں کو بھی نقصان پہنچا۔دوسری طرف لاہور میں رم جھم کے بعد سورج اور بادلوں کی آنکھ مچولی جاری ہے، گرمی کی شدت کم ہے، پنجاب کے مختلف علاقوں میں بھی رات گئے کہیں ہلکی اور کہیں تیز بارش ہوئی، وہاڑی، میاں چنوں، ساہیوال، پاکپتن میں بادل خوب برسے۔موسم کی خبر دینے والوں کا کہنا ہے کہ آئندہ چوبیس گھنٹے کے دوران پنجاب اور خیبر پختونخوا، کشمیر اور گلگت بلتستان میں بھی بارش کا امکان ہے۔ کراچی والے بھی تیار رہیں، پیر اور منگل کو برکھا رْت کا سماں ہو گا۔دوسری جانب خیرپور سمیت مضافاتی علاقوں سمیت مختلف مقامات پرگزشتہ روز سے تیز ہوائیں چلنے کا سلسلہ جاری رہنے کے باعث موسم خوشگوار ہو گیا،تما م دن بادل چھائے رہنے سے موسم ابر آلود رہا اور گرمی کا زور بھی ٹوٹ گیا تھا، مختلف علاقوں میں چلنے والی تیز ہواں نے سائین بورڈ ، درختوں اور کچی چھتوں کو متاثر کیا جبکہ بعض علاقوں میں بجلی کی فراہمی بھی متاثر ہوئی۔ جب کہ بلدیاتی اداروں کی جانب سے محکمہ موسمیات کی جانب سے بارش کی پیشن گوئی کے بعد سے برساتی نالوں ،گٹروں،گندے نالوں کی صفائی کا نظام بھی بہتر نہ کرسکی ہے جس کی وجہ سے شہریوں کو بارش کے دوران بارش کے پانی کی نکاسی کے نظام کی ابتر حالت سے پریشانی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

بلوچستان سیلاب

مزید : صفحہ اول