مسیحا بھی جھوٹا نکلا 

  مسیحا بھی جھوٹا نکلا 
  مسیحا بھی جھوٹا نکلا 

  

 حضرت آدم علیہ السلام سے لے کر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم تک ہر نبی نے اپنی قوم کو دجال کے بارے میں آگاہ کیا تھا اس کی طاقت کے بارے میں بتا کر اپنی اپنی قوم کو ڈرایا تھا کیونکہ یہودیوں میں نبی سب سے زیادہ تعداد میں بھیجے گئے اس لئے یہودی دجال کے بارے میں زیادہ جانتے ہیں لیکن کسی نبی نے اس کے حلیے کے بارے میں بیان نہیں کیا تھا لیکن رسول خدا صلی اللہ علیہ وسلم نے اس حلیے سے اپنی امت کو متعارف کروایا یہودی قوم طاقت اور اقتدار سے بے پناہ محبت کرتی تھی اس لیے انہوں نے دجال کو اپنا نجات دہندہ سمجھ لیا اور اسے اپنا مسیحا قرار دے دیا موجودہ دور کے یہودیوں کے مطابق دجال کا تعلق بنی یہودا حضرت یعقوب کی اولاد سے ہوگا اور حضرت داؤد علیہ السلام کے شاہی خاندان سے ہوگا وہ عام انسانوں کی طرح پیدا ہوگا پرورش پائے گا اس کے پاس بہت سی پراسرار طاقتیں ہو ں گی انہی طاقتوں کے بل بوتے پر وہ یہودیوں کا نجات دہندہ بن کر آئے گا یہودیوں کے مطابق وہ عظیم نجات دہندہ، عظیم سپہ سالار، عظیم رہنما،عظیم جج،عالم دین اور نسل انسانی کا عظیم بادشاہ ہوگا ان کے مطابق وہ انتہائی ذہین ہوگا جس کی وجہ سے دنیا کے سارے مذاہب ختم ہو جائیں گے اور صرف یہودیت باقی رہے گی۔

لیکن شاید یہودی یہ بات ماننے کو تیار نظر نہیں آتے کہ ان کے مسیحا کا خاتمہ حضرت عیسی علیہ السلام کے ہاتھوں ہوگا جب کہ یہودیوں کی اپنے نجات دہندہ کی اندھی تقلید ہی ان کے خاتمے کا سبب بنے گی غلط نہیں ہوگا اگر یہ کہا جائے کہ ان کا مسیحا ہی انہیں ذلیل اور رسوا کروائے گا موجودہ دور کی بات کی جائے تو قوم یوتھ کی حالت بالکل یہودیوں سے ملتی جلتی ہے جب پی ٹی آئی کی حکومت ترتیب دی جا رہی تھی تو اس وقت عمران خان کو اس قوم کا مسیحا بنا کر پیش کیا جا رہا تھا سوشل میڈیا اور کچھ معروف صحافیوں کو عمران خان کو مسیحا اور نجات دہندہ ثابت کرنے کا ٹھیکہ دیا گیا تھا یہ لوگ مختلف چینلز پر بیٹھ کر عمران خان کو عظیم رہنما،سپہ سالار، عالم دین اور انسانیت کا عظیم پاسبان ثابت کرنے کے لئے ہر جتن کرتے تھے اس کی شان میں گانے،ترانے اور قصیدے تیار کئے گئے اور لوگوں کی ذہن سازی کی گئی کہ گزشتہ حکومتیں پاکستان کی دشمن تھیں وہ سب تو غدار تھے انہوں نے پاکستان کو قرض کی دلدل میں ڈبویا یہ سب کرپٹ، منی لانڈرنگ،قبضہ مافیا،شوگر مافیا، عوام کا لہو چوسنے والے کیڑے، چور، ڈاکو لٹیرے،تھے  ۔

ان حالات میں اگر کوئی مسیحا پاکستان میں موجود ہے تو وہ صرف عمران خان ہے۔ایک قوم، قوم یوتھ منظر عام پر آگئی جن کی پہچان کچھ یوں ہوئی کہ وہ انتہا کے بدتمیز، جھوٹے، مکار، فراڈیے، دہاڑی باز،موقع پرست تھے جن کی شاید اپنی کوئی عزت تھی نہیں اور کسی دوسرے کی عزت کرنے کو وہ تیار نہیں تھے۔انہوں نے ڈی چوک اسلام آباد میں شاید اپنی پارٹی کے آئین اور قانون کے مطابق ایک سو چھبیس دن ٹریننگ حاصل کی جو ان کے مسیحا کی زندگی کا خلاصہ تھی۔خیر کچھ اندرونی اور بیرونی سرمایہ کاری سے ان کے مسیحا کو بر سر اقتدار لایا گیا لیکن شاید قدرت کا یہ قانون ہے کہ جن کی اصلیت کھل کر سامنے آنی ہو رب انھیں اقتدار سے نواز دیتا ہے ان کے مسیحا نے دو سو سے زیادہ ماہرین کی ٹیم ہونے کا دعوی کیا حکومت بنائی حکومت بھی ایسی کہ جس میں اپوزیشن چھٹی پر تھی ان کا مسیحا تقریبا چار سال اقتدار میں رہا ہر نئے دن کا آغاز نئے جھوٹ سے کرتا اور شام بنی گالہ؟وہ سب کے علم میں ہے۔

پھر اگلی صبح ریاست مدینہ اور خود کو نجات دہندہ کہہ کر دن کا آغاز ہوتا اور پھر سے وہی بنی گالہ کی وہی شام وہی شام کی مصروفیت  یوتھیوں کے نجات دہندہ نے ان چار سالوں میں ملکی تاریخ کا سب سے زیادہ قرضہ لیا وہ کہاں خرچ ہوا اس کا حساب لینے کا وقت آن پہنچا ہے۔ملک میں مہنگائی، غربت،بے روزگاری لوڈشیڈنگ، کرپشن، منی لانڈرنگ، شوگر مافیا، پیٹرول مافیا،قبضہ مافیا عائشہ گلالئی، گو گی فرح،مانیکا فیملی، عثمان بزدار، ترین، علیم، مراد سعید، فیاض چوہان،زلفی بخاری،انیل مسرت، حریم، خٹک اور ان جیسے سینکڑوں محب وطن لوگوں کو مسیحا کی پشت پناہی حاصل رہی لیکن افسوس کہ ان کا مسیحا بھی جھوٹا  نکلا آج کل  اپنی ناکامیوں کا ملبہ امریکہ اور اپوزیشن پر ڈالنے کی ناکام کوشش کی جارہی ہے ان کا جھوٹا مسیحا خود کو کبھی ارتغرل اور کبھی اردگان کے القابات سے نوازنے کی سر توڑ کوشش کرتا رہا لیکن حقیقت میں کرتوگلو نکلا جس نے اپنے ہی ملک کی جڑیں ہلا کر رکھ دیں اور رہی سہی کسر آئین سے غداری کر کے پوری کر دی۔

میں نے اپنے گزشتہ کالم میں عرض کیا تھا کہ اگر عمران خان عزت دار ہیں تو یہ اخلاقی جرات کا مظاہرہ کریں استعفیٰ دے دیں اگر وہ چاہتا تو استعفی دے کر عزت بچا سکتا تھا لیکن اس نے عدم اعتماد کے ذریعے رسوا ہونا مناسب سمجھا  جھوٹا مسیحا تو چلا گیا لیکن دیکھنا یہ ہے کہ قوم یوتھ کو نارمل حالت میں واپس آنے میں کتنا وقت درکار ہوگا۔ساری پاکستانی قوم کو ان کے لیے دعا کرنی چاہیے کیونکہ یہ اس وقت دکھی ہے کیوں کے ان کا مسیحا بھی جھوٹا نکلا۔

مزید :

رائے -کالم -