پنسلوانیا،پھٹے پرانے کپڑوں کو از خود رفو کرنے والا مائع تیار

پنسلوانیا،پھٹے پرانے کپڑوں کو از خود رفو کرنے والا مائع تیار
پنسلوانیا،پھٹے پرانے کپڑوں کو از خود رفو کرنے والا مائع تیار

  

پنسلوانیا(مانیٹرنگ دیسک)پین اسٹیٹ یونیورسٹی میں انجینئرنگ سائنس اور مکینکس کے پروفیسرز نے ایک ایسا مائع تیار کرلیا ہے جسے پھٹے کپڑوں پر ٹپکا کر سکھا لیا جاتا ہے اور یوں وہ (سلائی کیے بغیر) کپڑوں کی مرمت کرسکتا ہے یہاں تک کہ یہ بعد میں کپڑے دھونے پر بھی انہیں صحیح سلامت رکھتا ہے۔ماہرین کے گروپ کو یہ کامیابی کئی سالہ کوششوں کے بعد حاصل ہوئی اور بالآخر انہوں نے ایک مائع تیار کرلیا جو ’’بایو ڈی گریڈ ایبل‘‘ ہے یعنی یہ کپڑے کے ساتھ ہی گل کر خود بخود ختم ہوجاتا ہے اور ماحول کو نقصان نہیں پہنچاتا۔ پھٹے ہوئے کپڑے کی مرمت کرنے کے لیے اس مائع کو متاثرہ مقام پر ڈال دیا جاتا ہے جہاں سے کپڑا واپس جڑ جاتا ہے اور وہ بھی سوئی دھاگا استعمال کیے بغیر۔اس عجیب و غریب ’’رفو گر مائع‘‘ کی تیاری میں جراثیم اور خمیر استعمال کیے گئے ہیں جب کہ سوتی، اونی، پولیسٹر اور دوسری اقسام کے کپڑوں پر اسے ایک سال تک آزمایا بھی جاچکا ہے۔ آزمائشوں کے دوران معلوم ہوا کہ اس مائع کے استعمال سے نہ صرف یہ کہ کپڑے کا معیار برقرار رہتا ہے بلکہ (جوڑے جانے کے بعد) جب کپڑے کو واشنگ مشین میں بھی دھویا جاتا ہے تو بھی وہ صحیح سلامت رہتا ہے۔ یعنی یہ کپڑے کے ساتھ ہی گل کر ختم ہوتا ہے اس سے الگ نہیں ہوتا۔اس کا استعمال بھی بہت آسان ہے، کپڑے کے پھٹے ہوئے حصوں پر یہ مائع تھوڑی سی مقدار میں ٹپکایا جاتا ہے پھر ان پر نیم گرم پانی ڈالا جاتا ہے اور سب سے آخر میں کپڑے کے پھٹے ہوئے حصوں کو ایک دوسرے سے جوڑ کر صرف ایک منٹ کے لیے دباکر رکھا جاتا ہے۔ اس کے بعد یہ حصے اس طرح آپس میں جڑتے ہیں کہ گلنے پر ہی ختم ہوتے ہیں۔ دلچسپی کی بات یہ ہے کہ اس ساری کارروائی کے نتیجے میں کپڑے کے ریشے آپس میں جڑ جاتے ہیں اور پھر اپنی مرمت خود ہی کرلیتے ہیں۔

مزید : صفحہ آخر