ناہید خان اورصفدر عباسی کو مزارِ قائد میں داخلے سے روک دیا گیا

ناہید خان اورصفدر عباسی کو مزارِ قائد میں داخلے سے روک دیا گیا

کراچی(اسٹاف رپورٹر)پاکستان پیپلز پارٹی کی رہنما ناہید خان پیپلز پارٹی ورکرز کے مرکزی صدر ڈاکٹر صفدر عباسی پاکستان پیپلز پارٹی ورکرز کے سینکڑوں کارکنوں کے ہمراہ قائد(بقیہ نمبر29صفحہ12پر )

اعظم کے مزار کے گیٹ پر پہنچیں۔انتظامیہ اور پولیس الکاروں کی بڑی تعداد نے انھیں مزار میں داخل ہونے سے روک دیا ۔جس کے بعد پیپلز پارٹی کے رہنما ناہید خان ، ڈاکٹر صفدر عباسی اور پیپلز پارٹی ورکرز کے سینکڑوں کارکنوں نے مزار کے گیٹ کے باہر دھرنا دے دیا۔اس موقع پر ناہید خان نے شدید الفاظ میں انتظامیہ کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ میرے 90 فیصد کارکنوں کے ہاتھوں میں پاکستانی پرچم اور بابائے قوم قائدِ اعظم ،شہید ملت لیاقت علی خان کی تصاویر پر مشتمل پینافلیکس ہے ہاں البتہ چند ایک پینا فلیکس پر شہید ذوالفقار علی بھٹو اور متحرمہ بے نظیر بھٹو کی تصاویر موجود ہیں۔بابائے قوم نے اس ملک کا قیام عمل میں لایا ہے تو شہید ذوالفقار علی بھٹو اور بے نظیر بھٹو شہید نے اپنے لہو کے ذریعے اس ملک کی آبیاری کی ہے۔ انھوں نے پارٹی رہنماؤں کی تصویر اور پارٹی پرچم کے بغیر داخل ہونے سے انکار کردیا ۔ انھوں نے کہاکہ مزار آنے والی تمام سیاسی جماعتوں کے بینر پر ان کے قائدین کی تصاویر موجود ہیں ہمارے ساتھ امتیازی سلوک کیوں کیا جارہا ہے اور کس کے اشارے پر کیا جارہا ہے۔اس صورت حال کے بعد گیٹ پر کشیدگی میں اضافہ ہونے لگا پاکستان پیپلز پارٹی ورکرز کے کارکنوں نے شدید نارے بازی شروع کردی۔اس کے بعد مزارکی انتظامیہ نے ناہید خاں اور ڈاکٹر صفدر عباسی سے مذاکرات کے بعدانتظامیہ اپنے موقف سے دستبردار ہوگئی جس کے بعد ناہید ، ڈاکٹر صفدر عباسی اور پیپلز پارٹی ورکز کے کارکنوں نے مزار قائد پر حاضری دی ، فاتحہ خوانی کی اور ملک کی سلامتی کے لئے دعا کی۔

مزید : ملتان صفحہ آخر