خاتو ن ٹیچر کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے کو دس سال قید،رضامندی سے شرمناک کام کیا،مجرم

خاتو ن ٹیچر کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے کو دس سال قید،رضامندی سے شرمناک ...
خاتو ن ٹیچر کو زیادتی کا نشانہ بنانے والے کو دس سال قید،رضامندی سے شرمناک کام کیا،مجرم

  

دبئی(نیوزڈیسک)متحدہ عرب امارات کی ایک عدالت نے برطانوی خاتون ٹیچر کاریپ کرنیوالے ایک پھیری والے کو 10سال قید کی سزا سنا دی۔ملزم نے الزامات کی تردید کرتے ہوئے ریپ کو باہم رضامندی سے ہونے والاجنسی عمل قرار دیا۔

یہ بھی پڑھیں۔۔ایک ایسی شرمناک ویب سائٹ جس نے دنیا بھر کی خواتین کوپریشان  کردیا کیونکہ۔۔۔تفصیلات کیلئے یہاں کلک کریں

گولف نیوز کے مطابق متحدہ عرب امارات کی ایک عدالت میں ریپ کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے عدالت نے نائیجیریا کے ایک مزدور کو دس سال قید کی سزا سنادی ہے،عدالت کی جانب سے حکم جاری کیا گیا کہ مجرم کی سزا مکمل ہونے کے بعد اسے اس کے ملک ڈی پورٹ کردیا جائے۔

’137 لوگوں نے مجھ سے زیادتی کی اور 134 اب بھی۔۔۔‘ خاتون کی دردناک کہانی کی تفصیلات جاننے کیلئے یہاں کلک کریں

قبل ازیں دبئی کورٹ میں جج محمد جمال نے ٹیچر ریپ کیس کی سماعت کی جس دوران متاثرہ خاتون کے وکیل حمدان الشمسی نے عدالت کے روبرو موقف اختیار کیا کہ نائیجیریا سے تعلق رکھنے والے ایک پھیرے والے جس کا نام ای ایس بتایا گیا ہے نے میری کلائنٹ کے ساتھ زبردستی کی،متاثرہ خاتون نے موقف اختیار کیا کہ ”وہ لفٹ میں موجود تھا،اس نے مجھ سے میرے فلیٹ کا پتہ پوچھا تو میں نے بتا دیا کہ میں 65ویں منزل پر رہتی ہوں کیونکہ مجھے لگا کہ شاید وہ بھی اسی عمارت میں رہتا ہے ۔مگر جیسے ہی میں اپنے فلور پر پہنچی اور لفٹ سے باہر آئی تو ملزم نے میرا پیچھا شروع کردیا،اور میرے استفسار پر کہا کہ میں اس لئے پیچھے آگیا کہ دیکھوں آپ خیریت سے پہنچ گئی ہو یا نہیں جس پر میں نے کہا کہ رک جاﺅاور اب میرا پیچھا نہ کرنا لیکن وہ نہ رکا اور جیسے ہی میں نے اپنے فلیٹ کا دروازہ کھولاتو یہ بھی زبردستی اندر گھس آیا،کیونکہ جسمانی طور پر مجھ سے مضبوط تھا اس لئے زبردستی اندر گھسنے میں کامیاب ہو گیا،پھر مجھے اٹھالیا اور بستر پر پھینک کر میرے کپڑے نوچ ڈالے اور میری مزاحمت کے باوجود مجھے زیادتی کا نشانہ بنا ڈالااور پھر فلیٹ چھوڑ کر چلا گیا۔۔واقعہ کے بعد میں نے کپڑے بدلے اور خوفزدہ ہو کر اپنی دوست کے پاس چلی گئی جہاں سے پولیس کو پورٹ کیا۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

دوسری جانب ملزم کے وکیل نے موقف اختیار کیا کہ ”خاتون لفٹ میں شراب کے نشہ میں دھت تھیں ،انہوں نے مزدورکو اپنا بھاری بیگ 65ویں منزل تک پہنچانے کی درخواست کی جس پر وہ وہاں گیا۔میڈیکل رپورٹ میں خاتون کے شراب پینے جب کہ عمارت کی سی سی ٹی وی میں دیکھا جا سکتا ہے کہ خاتون جب بلڈنگ کے اندر داخل ہوئیں تو انہوں نے ایک بیگ اٹھا رکھا تھا۔وکیل نے اپنے موکل کا موقف بیان کرتے ہوئے کہا کہ یہ ریپ کیس نہیں بلکہ دونوں نے اپنی مرضی سے جسمانی تعلقات استوار کیابعدازاں خاتون نے جھوٹ بولا کہ اسے زیادتی کا نشانہ بنایا گیا ہے۔خاتون نے پولیس کو یہ نہیں بتایا تھا کہ اس نے شراب پی رکھی تھی۔

روزنامہ پاکستان کی خبریں اپنے ای میل آئی ڈی پر حاصل کرنے اور سبسکرپشن کیلئے یہاں کلک کریں

اس موقع تفتیشی افسر نے بتایا کہ ملزم اسی منزل پر رہتا تھاجس پر خاتون رہائش پذید ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں مجرم نے الزام لگایا کہ خاتون نے بہت زیادہ شراب پی رکھی تھی،اور مجھے ایک بھاری بیگ اس ے فلیٹ تک اٹھا لے جانے کی درخواست کی جس پر میں وہاں پہنچا تو خاتون نے خود شرمناک کام کی دعوت دی اور خود ہی اپنے کپڑے اتارے۔عمارت میں لگے سی سی ٹی وی کیمروں کی فوٹیج سے بھی دیکھا گیا ہے کہ خاتون اور ملزم آپس میں بات کر رہے تھے جس کے بعد ہاتھ پکڑ کر دونوں کو کمرے میں داخل ہوتے دیکھا جاسکتاہے۔

عدالت نے فریقین کا موقف سننے کے بعد ملزم کو مجرم قر دیتے ہوئے 10سال قید کی سزا سنائی جب کہ 15روز کے اندر اندر اپیل کا اختیار بھی دیا۔مجرم کے وکیل کا کہنا تھا کہ وہ اعلیٰ عدالت میں جائیں گے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس