داعش کے پاس ایک ایسا خطرناک ہتھیار آگیا جس کی کسی کو بھی توقع نہ تھی، بڑے بڑے ممالک کی نیندیں اُڑگئیں

داعش کے پاس ایک ایسا خطرناک ہتھیار آگیا جس کی کسی کو بھی توقع نہ تھی، بڑے بڑے ...
داعش کے پاس ایک ایسا خطرناک ہتھیار آگیا جس کی کسی کو بھی توقع نہ تھی، بڑے بڑے ممالک کی نیندیں اُڑگئیں

  

بغداد(مانیٹرنگ ڈیسک) شدت پسند تنظیم داعش کی طرف سے عراق میں مخالف افواج اور کرد جنگجوﺅں کے خلاف ایک ایسا خطرناک ہتھیار استعمال کرنے کا انکشاف ہوا ہے کہ مغربی ممالک کی نیندیں اڑ گئی ہیں۔ برطانوی اخبار ڈیلی میل کی رپورٹ کے مطابق داعش عراق میں کیمیائی گیس استعمال کر رہی ہے جس سے مخالف فوجیوں اور جنگجوﺅں کے جسموں پر خوفناک چھالے نکل رہے ہیں اور ان کے پھیپھڑے ناکارہ ہو رہے ہیں۔ یہ خطرناک مسٹرڈ گیس (Mustard Gas)ایٹم بم میں بھی استعمال کی جاتی ہے۔ دوسری جنگ عظیم میں اس گیس کا استعمال کیا گیا تھا جس کے بعد اقوام متحدہ نے جنگوں میں اس گیس کے استعمال پر پابندی لگا دی تھی۔ دوسری جنگ عظیم کے بعد اب پہلی بار داعش اس ایٹمی ہتھیار کا استعمال کر رہی ہے۔

’اسلامی لباس پہننے والی خواتین۔۔۔‘ مسلم ملک کے سربراہ نے ایسی بات کہہ دی کہ سن کر آپ کا خون بھی کھول اٹھے گا

رپورٹ کے مطابق داعش کے شدت پسند یہ گیس زیادہ تر کرد جنگجوﺅں کے خلاف استعمال کر رہے ہیں اور اب تک 100سے زائد کرد جنگجو اس کیمیکل گیس کے حملوں میں زخمی ہو چکے ہیں۔ شدت پسند ہفتے میں کم از کم دو بار اس گیس کا استعمال کر رہے ہیں۔ان کرد جنگجوﺅں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ”یہ گیس ان لوگوں کی جلد کو جلا رہی ہے اور تیزی سے ان کے پھیپھڑے ناکارہ بنا رہی ہے۔“ امریکہ اور اٹلی کے ماہرین بھی ان کرد جنگجوﺅں کے زخموں کا تجزیہ کرکے تصدیق کر چکے ہیں کہ ان کے زخموں کی وجہ مسٹرڈ گیس ہی ہے۔ان ماہرین کا کہنا ہے کہ ”اس انکشاف سے ظاہر ہوتا ہے کہ عراق میں شدت پسند اب صنعتی پیمانے پر جدید کیمیائی ہتھیار بنا رہے ہیں اور خدشہ ہے کہ داعش عراق میں اپنے مضبوط گڑھ موصل کا دفاع کرنے میں کامیاب ہو جائے گی جو اب عراقی فوج اور کرد جنگجوﺅں کے محاصرے میں ہے اور اس کا بہت سے حصہ شدت پسندوں سے چھڑایا جا چکا ہے۔“ واضح رہے کہ داعش کے کیمیکل گیس استعمال کرنے کے اس انکشاف سے چند روز قبل ہی بشارالاسد کی حکومتی افواج پر یہ الزام عائد کیا گیا تھا کہ وہ عام شہریوں پر کلورین گیس کے حملے کر رہی ہے۔

مزید : بین الاقوامی