پاکستان میں اسلامی نظام کے سوا دوسرے نظریہ کی گنجائش نہیں: پروفیسر ساجدمیر

پاکستان میں اسلامی نظام کے سوا دوسرے نظریہ کی گنجائش نہیں: پروفیسر ساجدمیر

  

ملتان(سٹی رپورٹر)مرکزی جمعیت اہل حدیث پاکستان کے سینیٹر پروفیسر ساجد میر نے کہا ہے کہ پاکستان میں اسلامی نظامِ حکومت کے سوا کسی دوسرے نظریے کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ ریاست مدینہ کو ماڈل بنا کر ہی پاکستان ترقی کرسکتا ہے ۔ قائد اعظم بھی پاکستان میں اسلامی نظری حیات کے (بقیہ نمبر6صفحہ12پر )

اصولوں پر مبنی ریاستی اور سماجی ڈھانچے کی تشکیل کے خواہش مند تھے۔ اسلام اور اس کے نظریات نے ہمیں جمہوریت کا سبق دے رکھا ہے۔ ملک میں حقیقی جمہوریت کے قیام کے لیے ابھی بڑی جدوجہد کی ضرورت ہے۔ پروفیسر ساجد میر نے کہا کہ کنٹرولڈ جمہوریت نظریہ پاکستان کی نفی ہے ۔ ہمیں قائد اعظم کے تصور جمہوریت کے مطابق ریاست کو چلانا ہو گا ۔ہمارے آباواجداد کی لازوال قربانیوں کے بعد معرض وجود میں آنے والے اس وطن عزیز کے خلاف ہر قسم کی سازشوں کا ڈٹ کرمقابلہ کریں گے ۔ آج ایک آزاد اور خودمختار قوم کے حوالے سے ہر پاکستانی کا سر فخر سے بلند ہے اور انصاف کا تقاضا یہی ہے کہ ہم آزادی کی نعمت عطا ہونے پر اللہ تبارک و تعالیٰ کے حضور سجدہ شکر اداکریں ۔ اپنے ذاتی اور انفرادی مفادات کو ملکی اور اجتماعی مفادات پر قربان کر دینا چاہیے۔ مسلمانانِ برصغیر کے لئے محض ایک آزاد مملکت کا قیام ہی مقصود نہ تھا، بلکہ اصل مقصد یہ تھا کہ مسلمان وہاں آزادی کے ساتھ اپنے ضابط حیات‘ اپنی تمدّنی روایات اور اسلامی قوانین کے مطابق زندگی بسر کر یں گے ۔

ساجد میر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -