نواز شریف کی سزا کیخلاف اپیل پر سماعت، نیب کی التوا کی درخواست مسترد

نواز شریف کی سزا کیخلاف اپیل پر سماعت، نیب کی التوا کی درخواست مسترد
نواز شریف کی سزا کیخلاف اپیل پر سماعت، نیب کی التوا کی درخواست مسترد

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) ہائیکورٹ نے سابق وزیراعظم نواز شریف کی سزا کےخلاف اپیل کی سماعت 2 روز کےلئے ملتوی کرنے کی نیب کی درخواست مسترد کردی۔

جسٹس اطہر من اللہ اور جسٹس گل حسن اورنگزیب پر مشتمل دو رکنی بینچ سابق وزیراعظم نواز شریف کی سزا کے خلاف اپیل کی سماعت کر رہا ہے۔

ڈپٹی پراسیکیوٹر نیب سردار مظفر عباسی نے نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث کی درخواست پر پیرا گراف وائز کمنٹس کےلئے وقت مانگا اور استدعا کی کہ جواب داخل کرنے کےلئے 2 دن کا التوا دیا جائے۔

سردار مظفر عباسی نے التوا کا عذر پیش کرتے ہوئے کہا کہ وقت پر وکیل صفائی سے درخواست کی کاپی نہیں ملی اس لیے سماعت ملتوی کی جائے جس پر جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ یہ التوا کےلئے گراونڈ نہیں بنتا اور نیب وکیل صفائی پر ایسے انحصار نہیں کرسکتا۔

نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ میں شہر سے بھی باہر تھا تاہم عدالت نے آج سماعت سے التوا کی درخواست مسترد کردی جس کے بعد نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث نے دلائل شروع کردیے۔

سماعت کے دوران جسٹس اطہر من اللہ کہا کہ رجسٹرار آفس سے بتایا گیا کہ 13 اگست کو ججز سے منسوب غلط ریمارکس چلائے گئے اور ہم نے یہ معاملہ سنجیدگی سے لیا ہے جسے ایف آئی اے کو بھجوا رہے ہیں۔

جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ منظم طریقے سے غلط ریمارکس بنچ سے منسوب کیے گئے، خواہشات پر مقدمات کا فیصلہ ہونے لگے تو معاشرے سے انصاف ختم ہوجائے گا۔

فاضل جج نے مزید کہا کہ ہم میڈیا کی قدر کرتے ہیں لیکن جو لوگ یہ سب کر رہے ہیں وہ توہین کے مرتکب ہوئے، ہم نے پہلے ہی پوچھ لیا تھا کسی فریق کو بنچ پر اعتراض ہے تو بتا دے لیکن کسی فریق نے انگلی نہیں اٹھائی۔

جسٹس اطہر من اللہ کے ریمارکس دیئے کہ شفاف ٹرائل کےلئے ضروری ہے کہ عدالت پر مکمل اعتماد ہونا چاہیے، اگر عدالت کے باہر ٹرائل شروع ہوجائے تو وہ سنگین توہین عدالت ہے۔

جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ ہم پر کوئی دباو نہیں، سامنے کوئی بھی ہو، قانون کے مطابق فیصلے کرنے ہیں۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -