مجھے جعلی سپیکر کہہ کر پکارا گیا لیکن میری پیشانی پر ایک مرتبہ بھی بل نہیں آیا : ایاز صادق

مجھے جعلی سپیکر کہہ کر پکارا گیا لیکن میری پیشانی پر ایک مرتبہ بھی بل نہیں ...
مجھے جعلی سپیکر کہہ کر پکارا گیا لیکن میری پیشانی پر ایک مرتبہ بھی بل نہیں آیا : ایاز صادق

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن )سابق سپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق نے کہاہے کہ میں نے ایوان میں مسکرا کر جعلی سپیکر کی آوازیں سنیں ، مجھے میرا نام لے کر کہا گیا کہ سپیکر منظور نہیں لیکن مجھے اللہ نے ہمت دی اور میری پیشانی پر ایک مرتبہ بھی بل نہیں آیا ، میں آپ کا نام نہیں لوں گا بلکہ آپ کو ” جناب سپیکر“ کہہ کر اور عزت سے مخاطب کروں گا ۔

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے ایاز صادق کا کہناتھا کہ میں نوازشریف کا شکریہ ادا کرتاہوں جنہوں نے مجھے سپیکر قومی اسمبلی نامزد کیا اور پیپلز پارٹی سمیت دیگر اپوزیشن جماعتوں کو بھی شکریہ ادا کرتاہوں کہ انہوں نے مجھے ووٹ دے کر کامیاب کروایا بلکہ جب میں دوسری مرتبہ الیکشن میں کامیاب ہونے کے بعد دوبارہ آیا تو پھر انہوں نے مجھے دوبارہ ووٹ دیا ۔

ان کا کہناتھا کہ جب یہ کہا گیا کہ پارلیمنٹ میں چور بیٹھے ہیں تو ہر رکن پارلیمنٹ کا دل دکھا ، اگر میرے ساتھ کچھ غلط ہوا ہے تو ضروری نہیں کہ میں بھی ان غلطیوں کی طرف جاﺅں ، یہ سارے میرے بھائی بیٹھے ہیں ، سیاسی اختلاف اپنی جگہ لیکن ایک دوسرے کی عزت کرنی چاہیے ،مشکل وقت میں خورشید شاہ نے میرا بہت ساتھ دیا جو کہ قابل تعریف ہے ۔

مزید :

قومی -