کلین اینڈ گرین پاکستان پروگرام ماحولیاتی چیلنجز کو کم کریگا: چیئر مین فیڈ مک 

  کلین اینڈ گرین پاکستان پروگرام ماحولیاتی چیلنجز کو کم کریگا: چیئر مین فیڈ ...

  

لاہور(نیوز رپورٹر)  چیئرمین فیصل آباد انڈسٹریل اسٹیٹ ڈویلپمنٹ اینڈ مینجمنٹ کمپنی (فیڈمک)  کے سربراہ میاں کاشف اشفاق نے وزیر اعظم عمران خان کے کلین اینڈ گرین پاکستان پروگرام کا خیر مقدم کرتے ہوئے اسے صحیح سمت میں ایک بڑا قدم قرار دیا ہے جو قدرتی آفات سے پاکستان کو محفوظ بنانے اور شجرکاری کے ذریعے ماحولیاتی چیلنجز کو کم کرنے میں بہت معاون ثابت ہو گا۔ انسٹی ٹیوٹ آف کمیونیکیشن اسٹڈیز (آئی سی ایس) پنجاب یونیورسٹی کے طلباء کے ایڈوانس رپورٹنگ کے 7 ویں سمسٹر کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ فیڈمک ماحولیاتی تحفظ کے حوالے سے آگہی کے لئے تمام ٹھوس اور نتیجہ خیز اقدامات کرنے کیلئے پوری طرح تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ علامہ اقبال انڈسٹریل سٹی اور ایم تھری انڈسٹریل سٹی میں شجرکاری کے مقصد کے لئے تقریبا 40 فیصد اراضی مختص کی گئی ہے اور ماحولیاتی پالیسیوں کے مطابق صنعتی آلودگی کو کم کرنے کے لئے ایک لاکھ سے زیادہ درخت لگائے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس میدان میں وزیر اعظم عمران خان کی سربراہی میں پاکستان نے ایک نئے دور کا  آغاز کیا ہے۔ تبدیلی کے بینر تلے پورے حکومتی نظام کی اصلاح کی جارہی ہے۔ پاکستان کی معیشت کو بحالی کی شاہراہ پر ڈال دیا گیا ہے۔ ملکی وسائل کی بچت، سرمایہ کاری کے فروغ اور صنعتی نظام میں بہتری پاکستان کو معاشی نمو کی راہ پر ڈالے گی۔ جنگلات کے موجودہ منظر نامے کے بارے میں انہوں نے کہا کہ پاکستان ان ممالک میں سے ایک ہے جہاں جنگلات کا رقبہ تیزی سے سکڑ رہا ہے اور اس سے ملک کو بے حد معاشی اور ماحولیاتی نقصان پہنچا ہے۔  پاکستان میں جنگلات کی کٹائی بظاہر چھوٹا سا معاملہ سمجھا جاتا تھا لیکن درحقیقت یہ ایک بہت بڑا مسئلہ ہے کیونکہ اس سے نہ صرف ماحولیات پر منفی اثر پڑ رہا ہے بلکہ معیشت کو بھی سخت نقصان پہنچ رہا ہے جس سے نمٹنے کیلئے حکومت، نجی شعبہ اور معاشرے کے تمام طبقات کو مل کر کام کرنا ہوگا۔ میاں کاشف نے کہا کہ جنگلات نہ صرف حیاتیاتی تنوع اور ماحولیاتی تبدیلیوں کے خلاف ڈھال ہیں بلکہ یہ ملکی معیشت کے لئے بھی انتہائی اہم ہیں۔  انہوں نے کہا کہ لکڑی کی پیداوار، پروسیسنگ اور کاغذ کی صنعتوں کا عالمی جی ڈی پی میں حصہ ایک فیصد سے زائد ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان پاکستان کو یورپ سے بھی زیادہ سرسبز بنانے کے لئے پرعزم ہیں اور گرین ٹیکنالوجی کے فروغ کے لئے اقدامات کر رہے ہیں۔ ملک بھر کی بزنس کمیونٹی کو قابل بھروسہ متبادل توانائی کے حصول کیلئے اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔

 انہوں نے کہا کہ پاکستان بہت بڑی نوجوان آبادی والی صارف مارکیٹ ہے اور وہ مقامی قابل تجدید توانائی کا استعمال کرتے ہوئے گرین ٹیکنالوجی کو اپنانے کے لئے ایک مثالی ملک ہے۔ ایک اور سوال کے جواب میں فیڈمک کے سربراہ نے کہا کہ یورپی یونین میں پاکستان کے تجارتی شراکت دار یقینی طور پر پاکستان میں ماحول دوست منصوبوں کو متعارف کرانے اور ان کے فروغ میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں۔ میاں کاشف نے کہا کہ پاکستان میں پورا سال فضلہ، بائیو ماس، سلاٹر ہاؤس فضلہ، سورج کی روشنی، ہوا اور چھوٹے اور بڑے پیمانے پر پن بجلی سے توانائی کے حصول کی صلاحیت موجود ہے۔  گرین ٹکنالوجی کے استعمال سے پاکستانی حکومت اور کمپنیاں توانائی کی بڑھتی ہوئی طلب اور ماحولیاتی تحفظ سمیت بہت سے ابھرتے ہوئے چیلنجز پر قابو پاسکتی ہیں۔ سینئر فیکلٹی ممبر آئی سی ایس ڈاکٹر وقار چوہدری نے طلباء کو فیڈمک کے بارے میں آگاہی دی اور ماحولیات کی اہمیت اجاگر کرنے پر میاں کاشف اشفاق کا شکریہ ادا کیا۔ طلباء کے وفد میں احسان احمد خان، حوریہ بٹ، زین حیدر، قیصر اقبال، سمیرہ شاہیم اور فیاض الدین شامل تھے۔  

مزید :

کامرس -