سلامتی کونسل میں قرارداد پر کیسے عمل کیاجاتاہے ؟سابق مستقل مندوب نے بتادیا

سلامتی کونسل میں قرارداد پر کیسے عمل کیاجاتاہے ؟سابق مستقل مندوب نے بتادیا
سلامتی کونسل میں قرارداد پر کیسے عمل کیاجاتاہے ؟سابق مستقل مندوب نے بتادیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) اقوام متحدہ سابق مستقل مندوب منیر اکرم نے کہا ہے کہ سلامتی کونسل میں کسی بھی قرارداد پر درجہ بہ درجہ عمل کیا جاتاہے ، پہلے سلامتی کونسل کے ارکان آپس میں اجلاس کرتے ہیں اوراگر کچھ کہنا ہوتو کہہ دیتے ہیں ، اس کے بعد دیکھتے ہیں کہ سکیورٹی کونسل کے ممبر ز اتفاق کرتے ہیں کہ اس پر کیسے آگے بڑھا جائے؟

دنیا نیوز کے پروگرام ”دنیاکامران خان کے ساتھ“میں گفتگو کرتے ہوئے منیر اکرم نے کہا کہ سلامتی کونسل میں کسی بھی قرارداد پر درجہ بہ درجہ عمل کیا جاتاہے ، پہلے سلامتی کونسل کے ارکان آپس میں اجلاس کرتے ہیں اوراگر کچھ کہنا ہوتو کہہ دیتے ہیں ، اس کے بعد دیکھتے ہیں کہ سکیورٹی کونسل کے ممبر ز اتفاق کرتے ہیں کہ اس پر کیسے آگے بڑھا جائے؟ انہوں نے کہا کہ سلامتی کونسل کے ممبران پہلی ملاقات آپس میں کرتے ہیں اور ان کو مسئلہ پر بریفنگ دی جاتی جس پر سوچ بچار کی جاتی ہے ۔

ان کا کہنا تھا کہ اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بھی کبھی کبھار اس اجلاس میں آجاتے ہیں۔منیر اکرم نے کہا کہ جب ایک قرارد اد اپنا لی جاتی ہے تو دونوں پارٹیاں اس قرار داد کو مان جاتی ہیں توپھر وہ اس قرارداد کی پابندی ہوجاتی ہیں لیکن اب ہندوستان اپنے موقف سے پیچھے ہٹ گیا ہے ۔انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ میں کسی قرارداد پر عمل در آمدکا ایک لمبا عمل ہے لیکن پاکستان نے جو قرار داد موو کی ہے ، اس پر ہم کو کامیابی ملے گی ۔ان کاکہنا تھا کہ اس وقت مقبوضہ کشمیر میں مکمل لاک ڈاﺅ ن اور پوری وادی میں کرفیونافذ ہے ۔

مزید :

قومی -