پروڈکشن آرڈر کیخلاف درخواست پر وفا قی ، پنجاب حکومت سے 10جنوری تک جواب طلب

پروڈکشن آرڈر کیخلاف درخواست پر وفا قی ، پنجاب حکومت سے 10جنوری تک جواب طلب

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی)لاہور ہائی کورٹ کے مسٹر جسٹس مامون رشید شیخ نے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے کے سپیکر قومی اسمبلی کے اختیار اور میاں شہباز شریف کے پروڈکشن آرڈر کے خلاف دائر درخواست پر وفاقی اور صوبائی حکومت سے 10جنوری تک جواب طلب کرلیا ۔دوران سماعت فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ 10 دن میں تو وفاقی حکومت کا دروازہ نہیں کھلتا ،یہ جواب کیسے دیں گے، درخواست گزار اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ کرپٹ ارکان سمبلی کو پروڈکشن آرڈر کے ذریعے تحفظ دینا غیر قانونی اقدام ہے۔میاں شہباز شریف کے غیر قانونی طور پر پروڈکشن آرڈر جاری کئے گئے،شہباز شریف کرپشن کے الزامات میں گرفتارہیں۔خواجہ سعد رفیق ابھی گرفتار ہوئے ہیں ، ساتھ ہی ان کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے کی درخواست دے دی گئی،مسلم لیگ (ن) کے ارکان اسمبلی نے پروڈکشن آرڈر زکو اپنی قیادت کے تحفظ کا ذریعہ بنا لیا ہے۔انہوں نے استدعا کی کہ میاں شہباز شریف کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے کے اقدام کوکالعدم کیا جائے اورسپیکر کو آئندہ پروڈکشن آرڈر جاری کرنے سے روکا جائے۔سرکاری وکلاء نے کہا کہ ہم اس درخواست کا جواب داخل کرنا چاہتے ہیں،اس کے لئے مہلت دی جائے۔فاضل جج نے کیس کی سماعت 10جنوری پر ملتوی کی تو درخواست گزار نے استدعا کی کہ کوئی قریبی تاریخ دے دی جائے جس پر فاضل جج نے کہا کہ 10 دن میں تو وفاقی حکومت کا دروازہ نہیں کھلتا یہ جواب کیسے دیں گے۔اس کیس کی مزید سماعت 10جنوری کو ہوگی۔

پروڈکشن آرڈر

مزید :

علاقائی -