وہ خاتون جس کا پیشہ ہی بچے پیدا کرنا ہے

وہ خاتون جس کا پیشہ ہی بچے پیدا کرنا ہے
وہ خاتون جس کا پیشہ ہی بچے پیدا کرنا ہے

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) ٹیکنالوجی کی جدت نے کچھ نئے پیشے بھی روشناس کروائے ہیں جو ماضی میں وجود نہیں رکھتے تھے لیکن جدید طبی ٹیکنالوجی کی بدولت اس برطانوی خاتون نے جو پیشہ اختیار کر رکھا ہے اس کے متعلق سن کر آپ کی حیرت کی انتہاءنہ رہے گی۔ میل آن لائن کے مطابق برطانوی شہر کلوچیسٹر کی اس 52سالہ کیرل ہرلاک نامی خاتون نے کمرشل سروگیٹ (متبادل ماں)کا پیشہ اپنا رکھا ہے اور لوگوں کے بچے پیدا کرتی ہے۔ یہ ان شادی شدہ جوڑوں کو اپنی خدمات مہیا کرتی ہے جن میں خاتون طبی پیچیدگیوں کی بناءپر خود بچے کو جنم نہیں دے سکتی۔

میاں بیوی مصنوعی طریقہ افزائش کے ذریعے لیبارٹر میں اپنے سپرمز اور بیضے سے ایمبریو بنواتے ہیں اور کیرل کے پیٹ میں رکھوا دیتے ہیں۔ کیرل ان کے بچوں کو جنم دیتی اور بدلے میں ان سے رقم لیتی ہے۔خود اس کی اپنی دو بیٹیاں 28سالہ سٹیفنی اور 24سالہ میگھن ہیں جبکہ وہ دوسرے لوگوں کے اب تک 13بچے پیدا کر چکی ہے۔ 27سال کی عمر میں اس نے پہلی بار کسی اور جوڑے کے بچے کو جنم دیا اور آخری کرائے کا بچہ اس نے 2013ءمیں پیدا کیا۔ پورے کیریئر میں ایک بار اس نے جڑواں اور ایک بار بیک وقت تین بچوں کو جنم دیا۔ کیرل کا کہنا ہے کہ”اب میں ایک بار پھر کسی ایسے جوڑے کی تلاش میں ہوں جسے سروگیٹ کی ضرورت ہو۔ اگر مجھے کوئی ایسا جوڑا مل جاتا ہے تو یہ میرا آخری بچہ ہو گا۔ اس کے بعد میں اس پیشے سے ریٹائر ہو جاﺅں گی۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -برطانیہ -