10 کشمیریوں کے شہادت کے خلاف مقبوضہ کشمیر میں تین روزہ ہڑتال شروع،بھارت ہمیں بار بار مارنے کے بجائے ایک ہی بار مارڈالے:میرواعظ عمر فاروق

10 کشمیریوں کے شہادت کے خلاف مقبوضہ کشمیر میں تین روزہ ہڑتال شروع،بھارت ہمیں ...
10 کشمیریوں کے شہادت کے خلاف مقبوضہ کشمیر میں تین روزہ ہڑتال شروع،بھارت ہمیں بار بار مارنے کے بجائے ایک ہی بار مارڈالے:میرواعظ عمر فاروق

  

سری نگر(ڈیلی پاکستان آن لائن)جنوبی کشمیر کے پلوامہ ضلع میں بھارتی قابض فوج کے ہاتھوں 10 کشمیریوں کے شہادت کے خلاف مقبوضہ کشمیر میں تین روزہ ہڑتال شروع ہو گئی،ہڑتال سے مقبوضہ کشمیر بھر میں کاروبار زندگی معطل ہو کر رہ گیا، ہڑتال اتوار اور منگل کے روز بھی جاری رہے گی ۔

تفصیلات کے مطابق مقبوضہ وادی میں قابض فوج کی جانب سے 10 نہتے کشمیریوں کی شہادت نے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال مزید کشیدہ کر دی ہے جبکہ بھارتی ظلم و بربریت کے خلاف سید علی شاہ گیلانی، میر واعظ عمر فاروق او رمحمد یاسین ملک پر مشتمل مشترکہ آزادی پسند قیادت نے 3 روزہ ہڑتال  کی اپیل کر دی  ہے جس کے بعد مقبوضہ وادی میں تمام تجارتی و تعلیمی ادارے  بند ہو گئے ہیں اور کشمیری عوام اپنے بھائیوں کی شہادت پر سراپا احتجاج ہیں ،مشترکہ حریت قیادت نے نہتے شہریوں کے قتل پر بھارتی فورسز کی شدید مذمت کی ہے۔مشترکہ آزادی پسند قیادت میں شامل کل جماعتی حریت کانفرنس ع کے سربراہ میر واعظ عمرفاروق نے تین روزہ ہڑتال کا اعلان کرتے ہوئے کشمیری عوام سے کہا ہے کہ وہ کاروبار زندگی معطل کر کے بھارتی درندگی کے خلاف احتجاج ریکارڈ کرائیں۔ انہوں نے اعلان کیا ہے کہ بھارتی فوج کے مظالم کے خلاف 17 دسمبر کو سری نگر میں بادامی باغ کنٹونمنٹ کی طرف احتجاجی مارچ کیا جائے گا ۔انہوں نے کہا کہ بھارتی حکومت نے کشمیریوں کو اپنی فورسز کے ہاتھوں مارڈلنے کا فیصلہ کر رکھا ہے ۔مشترکہ مزاحمتی قیادت اور عوام سوموار17دسمبر کو بادامی باغ فوجی کنٹونمنٹ کی طرف مارچ کریں گے اور بھارت سے کہیں گے کہ وہ ہمیں بار بار مارنے کے بجائے ایک ہی بار مارڈالے۔ انہوں نے کہا ہے کہ بھارتی حکومت مقبوضہ کشمیر میں انسانیت سوز مظالم بند کرے، قتل کرنا ریاستی پالیسی بن گئی ہے، ایسی حرکتوں سے بغاوت اور نفرت کے سوا کچھ حاصل نہیں ہوگا۔ ادھر کشمیر یونیورسٹی میں طالب علموں نے جنوبی کشمیر کے پلوامہ ضلع میں فورسز کے ہاتھوں شہادتوں کیخلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔طالب علم آزادی کے حق میں نعرے بلند کررہے تھے۔اس سے قبل سوپور میں احتجاجی طالب علموں اور فورسز کے مابین جھڑپیں ہوئیں۔یہ جھڑپیں اس وقت شروع ہوئیں جب ڈگری کالیج سوپور کے طالب علم شہادتوں کیخلاف احتجاج کرنے کیلئے سڑکوں پر نکل آئے۔اسی طرح کے احتجاجی مظاہروں کی اطلاع سرینگر کے امر سنگھ کالیج سے بھی موصول ہوئی ہیں جہاں احتجاجی طالب علموں اور مظاہرین کے مابین جھڑپیں ہوئیں،ان جھڑپوں میں کئی کشمیری نوجوانوں کے زخمی اور گرفتار ہونے کی بھی اطلاعات ہیں ، وادی میں جگہ جگہ ہونے والےمظاہروں کو روکنے کے لئے قابض فوج اور سیکیورٹی فورسز کی بھاری نفری تعینات کی گئی ہے ۔

مزید :

قومی -علاقائی -آزاد کشمیر -مظفرآباد -